10 ربیع الاوّل, 1442 ہجری

: : :
(PST)

لاہور میں حضرت سید علی بن عثمان داتا گنج بخش (المعروف داتا علی ہجویری) رحمۃ اللہ علیہ کے 977ویں عرس کی تقریبات کا آغاز ہوگیا ہےجس کااختتام جمعرات اور جمعہ کی درمیانی شب خصوصی دعاؤں کے ساتھ ہوگا۔

عاشق اولیاء علامہ محمد الیاس عطار قادری دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے حضرت داتا گنج بخش رحمۃ اللہ علیہ کےعرس کے موقع پر اپنے خصوصی پیغام میں فرمایا کہ اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ1442ھ بمطابق 2020ءمیں حضور داتا گنج بخش رحمۃ اللہ علیہ کا977واں عرس جاری ہے۔ آپ رحمۃ اللہ علیہ کو دنیا سے رخصت ہوئے 977 سال ہوگئے مگر سبحان اللہ لوگوں کی دلوں پر اب بھی آپ کی حکومت قائم ہے۔ عاشقان اولیاء کے دلوں میں اب بھی عقیدتوں اور محبتوں کی شمع روشن ہیں اور تاقیامت روشن رہے گی۔ اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ

اے عاشقانِ اولیاء! داتا حضور سے محبت کا تقاضا ہےکہ آپ کی تعلیمات اور آپ حضور کے ارشادات پر دل و جان سے عمل کیا جائے۔

امیر اہلِ سنت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے کتاب ”کشف المحجوب“ میں بیان کردہ داتا صاحب کا ایک فرمان سناتے ہوئے فرمایا کہ داتا حضور رحمۃ اللہ علیہ کشف المحجوب میں اچھی صحبت کی اہمیت بیان کرتے ہوئے ارشاد فرماتے ہیں ”انسان جیسی صحبت اختیار کرتا ہے ویسی عادتیں اپناتا ہے، انسان تو انسان جانور بھی صحبت کا اثر قبول کرتے ہیں، شکاری پرندہ انسانوں کے ساتھ رہ کر ان سے مانوس ہوجاتا ہے، طوطا آدمیوں سے سیکھ کر ان کے جیسی بولی بولنے لگتا ہے، گھوڑا اپنی عادت چھوڑ کر فرما نبردار بن جاتا ہے، یہ مثالیں بتاتی ہیں کہ صحبت کتنا اثر رکھتا ہےاور یہ کس طرح عادتیں بدل دیتی ہیں۔

آپ دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے مزید فرمایا کہ اگر ہم اپنے آپ میں اور اس معاشرے میںPosetive تبدیلی لانا چاہتے ہیں تو ہمیں خود بھی اچھا ماحول بنانا ہوگااور دوسروں کو بھی اس کے ساتھ ملانا ہوگا، ایسا اچھا ماحول پانے کے لئے اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ دعوت اسلامی آپ کے سامنے ہے، اگر آپ دعوت اسلامی کے ساتھ اٹیج نہیں ہیں تو ایک بار دعوت اسلامی کے قریب آکر تو دیکھئے اللہ نے چاہا تو آپ کی دنیا و آخرت سنور جائیگی۔ نماز کی پابندی کرتے اور کرواتے رہیئے، مدنی چینل دیکھتے رہیئے۔

جھولیاں بھربھر کے لے جاتے ہیں منگتے رات دن

ہومیری امید کا گلشن ہرا داتا پیا

تختِ شاہی کی نہیں ہے آرزو عطارؔ کو

اِس کو بس کُتّا بنالو اپنا یا داتا پیا