بچے اور صحت

Tue, 26 Dec , 2023
146 days ago

بچے گھر کی رونق ہوتے ہیں ۔ اگر کوئی بچہ بیمار ہوجائے تو والدین بے چین ہوجاتے ہیں ۔ پریشان ہوجاتے ہیں ۔ظاہر ہے والدین اور اولاد کا تعلق ہی کچھ ایسا ہے ۔لیکن یہاں ایک بات قابل غور ہے کہ والدین صحت اور حفظان صحت کے حوالے سے کتنی awareness رکھتے ہیں ؟بچوں کے لیے کیا کیا احتیاطی تدابیر کرنی چاہئیں؟والدین جہاں بچوں کی تعلیم و تربیت کے حوالے سے کوشاں رہتے ہیں وہاں ان کی یہ بھی ذمہ داری ہے کہ بچوں کی healthکے حوالے سے بھی سنجیدگی اپنائیں ۔

قارئین :آئیے بچوں کی صحت و حفظان صحت کے حوالے سے کچھ Tipsجان لیتے ہیں ۔

متوازن غذائیت:: Balanced Nutrition

اپنى بچوں کو متوازن غذا فراہم کریں جس میں پھل، سبزیاں،اناج، مناسب مقدار میں پروٹین اور دودھ شامل ہوں۔نیز میٹھے مشروبات اور زیادہ نمکین خوردونوش کی چیزوں سے دور رکھیں ۔توانائی کو برقرار رکھنے کے لیے باقاعدگی سے بچوں کو کھانے کی ترغیب کے ساتھ ساتھ کھاناکھانے پر appreciateبھی دیں ۔

جسمانی سرگرمی:: Physical Activity

بچے کی عمر کے مطابق باقاعدہ جسمانی سرگرمی کو فروغ دیں۔ اسکرین ٹائم (ٹی وی، کمپیوٹر) کو محدود کریں ، آپ والدین ایک خاندان کی حیثیت سے بچوں کے ساتھ غیر نصابی سرگرمیاں میں شامل ہوکر ان کو فزیکل ایکٹیویٹی کا عادی بنانے کی بھرپور کوشش کریں ۔

مناسب نیند:: Adequate Sleep

اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ کا بچہ اپنى group agerکی اعتبار سے ٹھیک نیند کررہاہے ۔وقت مناسب پر اُسے سلادینے کا معمول بنائیں تاکہ اس کی نیند پوری ہوسکے ۔جو ایک جسم کا تقاضابھی ہے ۔کوشش کریں کہ بچوں کے لیے آرام دہ اور پرسکون نیند کا ماحول بنائیں۔

حفظان صحت::Hygiene

اپنے بچوں کو حفظان صحت کے اچھے طریقےضرور سیکھائیں اور ا ن اصولوں پر عمل کرنے کی صورت میں بچوں کی حوصلہ افزائی بھی کریں مثلابچوں کو ہاتھ دھونے ، دانتوں کی صفائی ،ناخن کاٹنے ،صاف کپڑے پہننے ،غسل کرنے کے حوالے سے تربیت دیں اور جب وہ بِنا بولے اس پر عمل پیراہوں تو آپ تعریف کی صورت میں ان کی حوصلہ افزائی ضرور کردیں تاکہ ان کا صفائی و ستھرائی کا جذبہ سرد نہ پڑے ۔

جذبات کی نگہداشت :: Well- Being Emotional

اپنے گھر کو سکھ چین اور محبت اور اپنائیت کا گہوارہ بنائیں ۔بچوں کے لیے ایک environment friendly بنائیں ۔جہاں بچہ اپنے من کی بات آپ سے کرسکے ۔اپنے آئیڈیاز، اپنے خدشات ،اپنی مشکلات پوری energyکے ساتھ آپ کو بتاسکے ۔یہ اس بچے کی مینٹل ہیلتھ کے لیے بہت ضروری ہے ۔آپ اپنے اندرسننے کا ظرف اور بچے کو کہنے کا حق ضرور دیں ۔تاکہ آپ گاہے گاہے اپنے بچے کے بارے میں جان سکیں کہ وہ کیا سوچتاہے اور کیاکیا کرنے کا ارادہ رکھتاہے ۔نیزاپنے بچے کو اعصابی طور پر مضبوط کرنے کے لیے ان سے اپنى زندگی کے مشکل حالات کی اسٹوری shareکریں جس میں آپ مشکل سے نکلنے کے طریقے تلاش کرکے مشکل سے نکل گئے تھے تاکہ بچہ مہم جو بن سکے ۔

حفاظت: :Safety

حادثات سے بچنے کے لیے اپنے گھر کو چائلڈ پروف بنائیں۔عمر کے مطابق کار سیٹ اور سیٹ بیلٹ استعمال کریں۔اپنے بچے کو حفاظتی اصولوں کے بارے میں تعلیم دیں، جیسا کہ سڑک پار کرنے سے پہلے دونوں طرف دیکھنا،زیبراکراسنگ سے کراس کرناوغیرہ ۔

صحت کا باقاعدہ معائنہ:: Check-up Regular Health

بچوں کو چیک اپ کے لیے اطفال کے ماہر کے پاس باقاعدگی سے دورے کا شیڈول بنائیں۔کسی بھی صحت کے خدشات کو فوری طور پر حل کریں۔بیماری کا دورانیہ طویل نہ ہونے دیں ۔بیماری کی تشخیص کے بعد علاج میں تاخیر ہرگز نہ کریں۔

نقصان دہ چیز وں کو سرعام استعمال سے گریز کریں : Avoid using harmful substances in public

آپ کے بچے آپ کی حرکات و سکنات کو دیکھتے ہیں اور آپ کے عمل کو اپنانے کی کوشش کرتے ہیں ۔چنانچہ آپ بچوں کے سامنے اسموکنگ و دیگر نشے ہرگز نہ کریں بلکہ ہمارا تو مشورہ ہے کہ کسی کے بھی سامنے نہ کریں یہ آپ کے لیے بھی زہرِ قاتل ہے اورآپ کی اولاد کے لیے بھی زہر ہے ۔

تعلیمی محرک::Stimulation Educational

بچوں کی تعلیمی سرگرمیوں کے حوالے سے نفسیاتی پہلووں کا خیال ضرور رکھیں ۔اس انداز میں ایجوکیشن کو جاری رکھیں کہ بچہ اسکول کے کام ،ہوم ورک اور اسائنمنٹ کو بوجھ سمجھ کر نہ کرے ۔بلکہ خوشی خوشی بچہ سیکھنے کی کوشش کرے ۔

سماجی میل جول:: Social Interaction

اپنے بچوں کو سوشل بنائیں ۔خاندا ن ،پڑوس ،دوست وغیر ہ سے میل میلان رکھنے دیں ۔ان سے مراسم انھیں سوشل بنادیں گے ۔یہ معاشرے کے ان لوگوں سے کئی چیزیں سیکھیں گے ۔جو مستقبل میں انھیں رویوں کو اسٹڈی کرنے کے حوالے سے معاون ثابت ہوں گے ۔

قارئین:ہر بچہ منفرد ہوتا ہے، اور انفرادی ضروریات مختلف ہو سکتی ہیں۔ اب آپ نے غور کرنا ہے کہ آپ کے بچوں کو کس طرح اورکس حوالے سے آپکی توجہ کی ضرورت ہے ۔ اپنى اولادوں کا خیال رکھیں یہ اللہ کی نعمت ہیں ۔بہترین تعلیم و تربیت یافتہ اور صحت مند اولاد آپ کے لیے بنے گی بہترین اثاثہ ۔ اللہ کریم ہمیں اپنى اولاد کی اچھی تعلیم وتربیت اور ان کی بہترین دیکھ بحال کرنے کی توفیق عطافرمائے ۔


آج صبح ہم کراچی کے علاقے جمشید روڈ پر واقع "پردہ پارک" کے پاس ارشاد بھائی کے ٹھیلے پر ناشتہ کر رہے تھے  کہ کیا دیکھا ایک بائیک پر سوار تین باپ بیٹے یک دم اپنی موٹرسائیکل روکتے ہیں ، باپ بڑے بیٹے کو کچھ کہتا ہے ، بیٹا بائیک سے اترکر چند قدم پیچھے جاتا ہے اوربیچ روڈ میں پڑا مذہبی تحریر والا ایک اشتہار اٹھا کر پاس ہی موجود کمبے پر لگے مقدس اوراق والے باکس میں ڈال دیتا ہے اور پھر تینوں روانہ ہوجاتے ہیں۔

یہ سارا منظر دیکھ کرہم دل ہی دل میں خوش ہوئے، اللہ پاک کا شکر ادا کیا کہ یہ قوم اگرچہ نافرمانیوں کی حدیں پار کرچکی ہے لیکن ادب واحترام اب بھی بڑی حد تک باقی ہے ۔ حالانکہ باپ کلین شیو پینٹ شرٹ میں ملبوس اور بیٹے بھی اسی لباس میں تھے مگر انہوں نے مقدس اشتہار کا ادب کیا، اُس شخص نے نہ صرف ادب کیا بلکہ اپنے دونوں بچوں کو بھی ادب سکھایا۔ یہ عمل دیکھ کر مجھے حضرت بشر حافی رحمۃ اللہ علیہ بھی یاد آگئے جو توبہ سے قبل ایک شرابی تھے، شراب کے نشے میں کہیں جارہے تھے کہ راستے میں آپ نے ایک کاغذ کا ٹکڑا دیکھا جس پر ”بسم اللہ الرحمن الرحیم “ لکھا ہوا تھا،آپ نے اُسے اٹھا لیا اور عطر خرید کر اُسے لگایا اور ایک بلند جگہ پر رکھ دیا تو اللہ پاک کے نام کے ادب کی برکت سے انہیں بلندرتبہ عطا کیا گیا۔ یقینا اللہ کریم کبھی ایسے ادب کی وجہ سے بندے کو بڑا مقام ومرتبہ عطاکردیتا ہے، حتی کہ بندہ ادب کے سبب رب العالمین تک پہنچ جاتا ہے اور اُسے قرب خاص سے نوازدیا جاتا ہے۔ بے شک وہ بڑا کریم ہے، کرم کردے تو رند یعنی شرابی کو محبوب بنالیتا ہے ، اس لیے گناہ سے نفرت کی جائے، گناہ گار سے نہیں، بقول شاعر،

زاہد نگاہ ِتنگ سے کسی رند کو نہ دیکھ

شاید کہ اُس کریم کو تو ہے کہ وہ پسند

یاد رہے کہ نفرت نہ کرنا ایک الگ بات ہے اور کسی فاسق وفاجر کو تعظیم دینا یہ الگ مسئلہ ہے ، اس کی شریعت میں اجازت نہیں۔

مذکورہ واقعہ مذہبی اشتہار وفلیکس اوربینربنوانے والوں کو بھی متوجہ کرتا ہے کہ جب مقصد پورا ہوجائے تو اشتہارات وغیرہ اتارلیں اور انہیں یکجا کرکے مقدس اوراق والی تنظیمات کے حوالے کردیں یا خود انہیں کسی جگہ دفنا دیں یا دریا وسمندر میں ٹھنڈ ا کردیا کریں نیز اشتہار بنواتے وقت بھی خیال رکھیں کہ میٹر میں مقدس الفاظ وجملے نہ ہوں یا ضرورتا کم از کم ہوں اور بعد میں اس کی حفاظت کا پورا انتظام کیا جائے ورنہ دیکھا جاتا ہے کہ اللہ تعالی اور رسول پاک ﷺ کے اسمائے مبارکہ اورقرآنی آیات والے اوراق واشتہارات راستوں پر بلکہ معاذ اللہ گندی نالیوں اور کچرا کنڈیوں تک میں پڑے دکھائی دیتے ہیں۔کہیں یہ بے ادبی کسی بڑے خسارے کا سبب نہ بن جائے۔

آخر میں یہ بھی بتادوں کہ وہاں موجود مقدس اوراق والا باکس ادب سکھانے والی تحریک دعوتِ اسلامی کی ایک پیاری مجلس ”مجلس تحفظِ اوراقِ مقدسہ“ کی طرف سے لگایا گیا تھا۔یہ مجلس مقدس اوراق وغیرہ کو بےحرمتی سے بچانے اور شرعی اصولوں کے مطابق دفن، ٹھنڈا یا محفوظ کرنے کے لیے سرگرمِ عمل ہے۔ اس مجلس کے زیر اہتمام مقدس اوراق جمع کرنے کے لیے پاکستان میں مختلف مقامات پر ایک لاکھ سے زیادہ باکس لگائے جاچکے ہیں اور اس کام کے لیے 19ہزار سے زائد ذیلی ذمّہ داران کا تقرر بھی ہوچکا ہے۔ فالحمد للہ علی ذالک۔

اوراق مقدسہ کو محفوظ بنانے اور مزید معلومات کے لئے اس نمبر پر رابطہ کریں

021-111-252692

Call or W.app: +92-317-5022226


یہ مضمون PDF میں حاصل کرنے کے لئے download now پر کلک کریں

Download Now

ضلع بہاولنگر(Bahawalnagar) ہاکڑہ تہذیب کا مرکز ہے جوحضرت عیسی علیہ السلام کی پیدائش سے تین ہزار سال پہلے سے وجودمیں آئی ۔ یہاں کے لوگ قدیم دریائے ہاکڑہ کے کنارے رہتے تھے۔بہاولنگرکے وجودمیں آنے سے پہلے یہاں ایک گاؤں روجھانوالی تھا ۔1898ء میں نواب آف بہاولپورصادق محمد خان چہارم کے دورِحکومت میں روجھانوالی کے قریب 1898ء میں ایک نئے مقام کی بنیادرکھی گئی اوراس کا نام نواب صاحب کے والدمحمدبہاول خان چہارم کے نام پر بہاولنگر رکھا گیا۔1905ء میں اسے تحصیل کا درجہ حاصل ہوا۔1917ء میں یہاں نہری نظام آنے کے بعد اجناس منڈی قائم ہوئی جس کی وجہ سے اس نے ترقی کا آغازکیا۔جب آبادی بڑھی تو اس میں ریلوے اسٹیشن، تھانہ، ہسپتال،ڈاک خانہ اور حکومتی دفاتروغیرہ تعمیرکئے گئے۔ 1933ء میں اسے ضلع بنادیا گیا پھر 1946ء میں اسے تحصیل بنا کر ضلع بہاولپورمیں شامل کردیا گیا ۔1953ء میں اسے دوبارہ ضلع بنا دیا گیا۔

یہ پاکستان کے صوبہ پنجاب کے جنوبی سمت واقع ہے۔بہاولنگرسٹی اس ضلع کا صدرمقام ہے ۔اس کی پانچ تحصیلیں، بہاولنگر، چشتیاں، ہارون آباد، فورٹ عباس اور منچن آباد ہیں۔اس میں کل یونین کونسل 118ہیں ۔یہ صوبے کے دارالحکومت لاہور سے جانب جنوب 262کلومیٹر،بہاولپورشہرسے جانبِ مشرق 175کلومیٹرفاصلے پر ہے۔دریائے ستلج بہاولنگرشہرسے جانب شمال 6کلومیڑ پر واقع ہے۔اس ضلع کی کل آبادی 22لاکھ 33ہزارسے زیادہ ہے جبکہ رقبہ 17لاکھ 52ہزار81،ایکڑزبتایاجاتاہے ۔ اس کے شمالی علاقے مٹوالہ (Mut Wala)سے جنوبی علاقے مروٹ (Marot)تک کل فاصلہ 222کلومیٹر ہے یہاں زیادہ ترلوگ زراعت کے شعبے سے تعلق رکھتے ہیں ۔تجارت اورملازمت بھی اہم پیشوں سے ہیں ۔یہاں پیداہونے والی اجناس میں چاول، گندم،کپاس اورچنے شامل ہیں ،یہاں تین قسم کے چاول ہرپکی،باسمتی اورسیلا کی فیکٹریاں ہیں۔کپاس بھی اس ضلع کی اہم اوربہترین فصل ہے جوبیرون ملک بھیجی جاتی ہے۔ضلع کا اکثرحصہ تو زرعی زمین پر مشتمل ہے مگرتحصیل فورٹ عباس کا اکثرحصہ صحرائے چولستان میں شمارکیا جاتاہے۔

بہاولنگرشہرمیں دعوت اسلامی کے کام کا آغاز:

بہاولنگر شہر کے ایک اسلامی بھائی محمد مظفر عطاری کراچی میں ایک دُکان میں کام کرتے تھے۔ وہ دعوتِ اسلامی کے دینی ماحول سے غالباً 1982ء میں وابستہ ہوگئے اور پھریہ بہاولنگر واپس تشریف لے آئے ۔ انھوں نے بہاولنگرکی علامہ سیّد سردار شاہ صاحب والی مسجد میں درس دیناشروع کیا۔ان کی انفرادی کوشش سے کچھ اسلامی بھائی دعوتِ اسلامی سے منسلک ہوگئے۔1985ء میں دعوت اسلامی کا سالانہ اجتماع ککری گراؤنڈ کھارادرکراچی میں ہوا تو ان کے ساتھ آٹھ اسلامی بھائی اجتماع میں گئے، وہاں انھوں نے امیر اہلسنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ سے ملاقات کرکے بہاولنگر آنے کی دعوت دی ، امیر اہلسنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ نے فرمایا کہ میرے نگران حاجی سیّد عبدالقادر شاہ صاحب سے بات کرلیں۔یہ مبلغ ونگرانِ دعوت اسلامی حضرت الحاج سید عبدالقادر شاہ مرحوم کے پاس گئے تو انھوں نے فرمایا کہ اگر آپ اگلے سالانہ اجتماع کراچی میں 75 اسلامی بھائیوں کو لے آئیں تو امیر اہلسنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ بہاولنگر بیان کرنے تشریف لے آئیں گے، چنانچہ انھوں نے یہ ہدف اگلے سال1987ء میں ککری گراؤنڈ میں ہونے سالانہ اجتماع میں پورا کردیا۔1987ء میں امیر اہلسنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ نے کئی شہروں میں بیانات فرمائے اس میں بہاولنگربھی تھا ۔ امیراہلِ سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ تین اسلامی بھائیوں کے ہمراہ بذریعہ ٹرین بہاولنگر تشریف لائے، جو اس زمانے میں بہاول پور سے بہاولنگرکی جانب چلتی تھی۔بہاولنگرکے عالمِ دین حضرت مولانا فضل الرحمن عطاری کے بھائی مولانا عبدالرحمٰن شہید امیر اہلِ سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ کو ریلوے اسٹیشن بہاولنگر سے ریسو کرنے کے لئے گئے اور تانگے پر بٹھا کر تقویٰ کالونی نزدگورنمنٹ ڈگری کالج بہاولنگرمیں اپنے گھر لے آئے، مولانا فضل الرحمٰن عطاری صاحب بیان کرتے ہیں کہ امیر اہلِ سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ کےساتھ تین اوراسلامی بھائی بھی تھے ،اُن کے سروں پر امیراہل سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ کی طرح زلفیں اورعمامے تھے ،مَیں نے اپنی زندگی میں کالی داڑھی ،زلفوں اورعمامے والے حضرات پہلی مرتبہ دیکھے تھے ،مجھے بہت اچھے لگے۔یہ نماز عصر تا مغرب ہمارے گھر میں ٹھہرے ، اس وقت میری عمر 14 سال تھی۔امیر اہل سنت نےبہاولنگرکی علامہ سید سردار شاہ صاحب والی مسجد میں بیان فرمایا۔ بہاولنگرکے قدیم اسلامی بھائی حاجی محمد یونس صاحب نے بتایاکہ مجھے ابھی بھی یادہے کہ امیراہلِ سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ مسجد کی کھجور والی چٹائی پر لیٹے ہوئے تھے ،گرمیوں کے دن تھے۔امیراہل سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ کے بیان میں ہزاروں اسلامی بھائیوں نے شرکت کی ۔اس کے بعد دعوت ِ اسلامی کے دینی کاموں میں مزیداضافہ ہوا۔یہی وجہ ہےکہ امیراہلِ سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ نے 1989ء میں دوبارہ بہاولنگرسٹی میں بیان واجتماع کے لئے وقت عطافرمایا ۔دوسری مرتبہ کا ہونے والااجتماع پہلے والے اجتماع سے بھی بڑاتھا۔اس اجتماع کا انعقاد جامعہ رضائے مصطفی بہاولنگرکی مسجدمیں کیاگیا تھا۔یہ مسجدشرکائے اجتماع سے فل ہوگئی تھی۔

ضلع بہاولنگرکے دینی کامو ں کا ایک جائزہ :

اس وقت(اکتوبر2023ء میں ) ضلع بہاولنگرمیں ہزاروں اسلامی بھائی دعوت اسلامی کے دینی ماحول سے وابستہ ہیں۔ اس ضلع میں اسلامی بھائیوں کے14ہفتہ واراجتماعات ہوتے ہیں جن میں ہر ہفتے اوسطاً 2 ہزار 493اسلامی بھائی شرکت کرتے ہیں ۔٭بڑی عمرکے اسلامی بھائیوں کو تجویدوقرآت کے ساتھ قرآن کریم پڑھانے والے مدرسۃ المدینہ بالغان کی تعداد133ہے جس میں 502،اسلامی بھائی روزانہ تعلیم قرآن حاصل کرتے ہیں۔٭بچوں اوربچیوں کےلئے کل وقتی 43 مدرسۃ المدینہ قائم ہوچکے ہیں جن میں اساتذہ وناظمین کی تعداد91اورطلبہ وطالبات کی تعداد2100ہے ۔٭درس نظامی (عالم کورس )کے لیے 5جامعۃ المدینہ بن چکے ہیں جن میں اساتذہ وناظمین کی تعداد24ہے ان میں 429 طلبہ درس نظامی یعنی عالم کورس کررہے ہیں ۔ ایک فیضان اسلامک اسکول بھی بنایاجاچکاہے جس میں بچوں اوربچیوں کی تعداد222ہے۔٭یہاں دوفیضان آن لائن اکیڈمیزکے آغازکی تیاریاں بھی ہورہی ہیں ۔٭ضلع بہاولنگرمیں دعوت اسلامی نے جو مساجدتعمیرکی ہیں یا جن کا انتظام وانصرام اس کے پاس ہے ان کی کل تعداد 50 ہے۔٭12 شہروں میں دعوت اسلامی کے مدنی مراکز بنام فیضان مدینہ بھی بنائے جاچکے ہیں۔٭مجلس اثاثہ جات دعوت اسلامی کے مطابق یہاں دعوت اسلامی کے تحت مساجد،مدارس وجامعات وغیرہ عمارات اورپلاٹ کی کل تعداد 150 ہے ۔جوعمارات پایہ تکمیل تک پہنچ چکی ہیں وہ 63، جو زیرتعمیر ہیں وہ 35 جبکہ خالی پلاٹ کی تعداد 52 ہے۔٭ضلع بہاولنگر میں ہزاروں اسلامی بہنیں بھی دعوت اسلامی سے منسلک ہیں۔ ٭یہاں اسلامی بہنوں کے 79ہفتہ واراجتماعات ہوتے ہیں جن میں اوسطاً 1 ہزار 783 ،اسلامی بہنیں ہرہفتے شرکت کرتی ہیں۔٭مدرسۃ المدینہ بالغات کی تعداد68ہے جن میں بڑی عمرکی 644 اسلامی بہنیں پڑھتی ہیں ۔

تحصیل بہاولنگر کاتعارف:

تحصیل بہاولنگرایک سٹی اور31یونین کونسل پر مشتمل ہے۔شہر کی آبادی ایک لاکھ 61ہزارسے زیادہ ہے اور یہ آبادی کے اعتبارسے پاکستان کا 54واں بڑاشہرہے۔اس میں ایک درجن بازار ہیں۔ مختلف ملز، کارخانے، چڑیا گھر، پارک اورکئی نئی آبادیاں بن چکی ہیں ۔ اس میں کئی دارالعلوم اورگورنمنٹ کالج ہیں ۔اس کا شمار پاکستان کے گرم ترین شہروں میں ہوتاہے، گرمیوں میں اس کا درجۂ حرارت 54 درجہ سینٹی گریڈ تک بھی پہنچ جاتاہے ۔ڈونگہ بونگہ،تخت محل، چک مدرسہ اور ڈھاباں اس کے بڑے قصبےہیں۔تحصیل بہاولنگر میں تقریباً ساڑھے پانچ لاکھ(5,50000) لوگ رہائش پذیرہیں جبکہ اس کا رقبہ 4لاکھ 31ہزار 867 ایکڑز بتایا جاتاہے ۔

تحصیل بہاولنگرمیں دعوتِ اسلامی کا دینی کام :

تحصیل بہاولنگر میں دو مدنی مراکز ٭فیضان مدینہ فاروق آباد بہاولنگرسٹی اور ٭مدنی مرکز فیضان مدینہ مین روڈ ڈونگہ بونگہ قائم ہیں ۔یہاں عالم کورس کے لئے ایک جامعۃ المدینہ فاروق آباد بہاولنگرسٹی اور حفظ وناظرہ قرآن کریم کے لئے 12 مدارس المدینہ تعلیم قرآن میں مصروف ہیں۔ جن کے مقامات یہ ہیں :٭ذکر حبیب مسجد، گلبرک کالونی ، گلی نمبر 11، بہاولنگر سٹی٭مدنی کالونی گلی نمبر 8 بہاولنگر سٹی٭جامع مسجدچشتی ،مدینہ ٹاؤن، غالب آباد، بہاولنگر سٹی ٭محلہ فاروق آباد بہاولنگر سٹی ٭خان بابا روڈ نزد مغل ہوٹل بہاولنگر سٹی٭جامع مسجدمدینہ، مین روڈ، مدینہ ٹاؤن، بہاولنگر سٹی٭ظفر الہی عارف آباد، پل فورڈواہ ،بہاولنگر سٹی٭جامع مسجدنور مصطفی، نذیر کالونی، بہاولنگر سٹی٭محلہ فاروق آبادشرقی گلی نمبر 6 بہاولنگر سٹی ٭جامع مسجدنور،نجم آباد ، چک مدرسہ تحصیل وضلع بہاولنگر ٭اڈا نور سر (Noor Sar)نزد چک مدرسہ ،تحصیل وتحصیل بہاولنگر٭مدرسۃ المدینہ چک چاویکا، تحصیل و ضلع بہاولنگر ٭مصطفے آباد ،ر ضوان مارکیٹ ،ڈونگہ بونگہ تحصیل و ضلع بہاولنگر ۔٭مجلس اثاثہ جات دعوت اسلامی کے مطابق یہاں دعوت اسلامی کے تحت مساجد،مدارس المدینہ وجامعات المدینہ وغیرہ عمارات اورپلاٹ کی کل تعداد 58ہے ۔ جوعمارات پایہ تکمیل تک پہنچ چکی ہیں وہ 29،جو زیرتعمیر ہیں وہ 10 اور خالی پلاٹ کی تعداد 19ہے ۔٭یہاں اسلامی بہنوں کے 30ہفتہ واراجتماعات ہوتے ہیں جن میں 892،اسلامی بہنیں ہرہفتے شرکت کرتی ہیں ۔٭مدرسۃ المدینہ بالغات کی تعداد36ہے جن میں بڑی عمرکی 346 ،اسلامی بہنیں پڑھتی ہیں ۔

تحصیل چشتیاں کا تعارف :

چشتیاں (Chishtian)ضلع بہاولنگر کا قدیمی شہر ہے، یہ بہاولنگرشہرسے جانب ِ جنوب47کلومیٹر پر واقع ہے۔اس کی بنیادحضرت بابا فریدگنج شکر رحمۃ اللہ علیہ کے پوتے حضرت تاج سرورشہیدنے آج سے تقریباً سات سوسال پہلے رکھی ۔ان کامزاربھی یہیں ہے ۔مزاروالے علاقے کو پرانی چشتیاں کہتے ہیں ، نیا شہر ایک دو کلومیٹر کے فاصلے پر 20ویں صدی عیسویں کی ابتدامیں بنایاگیا ۔نہری اور ریلوے نظام کے بننے سے اس شہرنے بہت ترقی کی اور یہاں غلہ منڈی وجود میں آئی ۔آبادی کے اعتبار سے یہ پاکستان کا 59واں گنجان آباد شہر ہے اس کی آبادی تقریبا ًایک لاکھ 50ہزارکے قریب ہے ۔ یہ ضلع بہاولنگر کی ایک تحصیل ہے جس میں 29 یونین کونسلیں ہیں ۔چشتیاں سٹی سمیت تمام یونین کونسلز کی کل آبادی سات لاکھ ہونے والی ہے جبکہ اس کا رقبہ 3 لاکھ 47 ہزار 160،ایکڑز ہے۔ ڈہرانوالہ (Dahranwala) شہر فرید،بخشن خان (Bakshan Khan)اور مہار شریف اس کے اہم قصبے ہیں۔یہ دریائے ستلج کے قریب واقع ہے۔چشتیاں سے بہاولنگر شہر 45 کلومیٹر جانب شمال اور بہاولپور جانب جنوب 131 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے ۔

تحصیل چشتیاں میں دعوتِ اسلامی کا دینی کام :

چشتیاں وہ شہر ہے جس میں امیراہلِ سنت دامت بَرَکَاتُہمُ العالیہ دو مرتبہ 1989ء اور 1990ء میں تشریف لائے۔دونوں مرتبہ چشتیاں کے تاریخی اجتماعات ہوئے جن میں ہزاروں اسلامی بھائیوں نے شرکت کی۔اس وقت تحصیل چشتیاں میں تین مدنی مراکز ٭ فیضان مدینہ سینٹرل پارک،فوارہ چوک، چشتیاں سٹی، ٭فیضان مدینہ نزد psoپمپ ڈہرانوالہ اور٭فیضان مدینہ پنسوتہ چوک (Pansota Chowk)حاصل پور روڈ پر قائم ہیں ۔اس تحصیل میں عالم کورس کے لئے جامعۃ المدینہ مکی مسجد اسلام پورہ نزد پرانی عید گاہ روڈ چشتیاں سٹی قائم ہے اور تعلیم قرآن کے لئے 15 مدارس المدینہ ٭چیزل آباد، ہارون آباد روڈ، چشتیاں سٹی ٭مکی مسجد، مہاجر کالونی، گلی نمبر13، چشتیاں سٹی٭فیضان مدینہ، سینٹرل پارک، فوارہ چوک، چشتیاں سٹی٭بلال مسجد، علیمیہ چوک گلی نمبر 8، چشتیاں سٹی ٭جامع مسجدنور مصطفے، نیو گلشن اقبال ، چشتیاں سٹی٭بلال مسجد ،گلی نمبر 2 ،بغداد کالونی چشتیاں سٹی٭جامع مسجد قبا، محبوب کالونی،چشتیاں سٹی٭جامع مسجدانوار مدینہ، بلدیہ کالونی، چشتیاں سٹی٭تاج مدینہ، 101 فتح تحصیل چشتیاں٭بستی گل شاہ، تحصیل چشتیا ں٭الجنت الزہرہ شوگر ملز روڈ، بلال کوٹ،تحصیل چشتیاں٭چک نمبر 201 مراد نزد 75 موڑ ڈہرانوالہ٭مدنی کالونی، چشتیاں روڈ ،ڈہرانوالہ شروع کئے گئے ہیں۔یہ سب مدارس المدینہ طلبہ کے ہیں البتہ ایک مدرسۃ المدینہ طالبات کا بھی ہے جو چشتیاں سٹی کی تاج پورہ کالونی کے اعظم چوک میں قائم ہے۔٭مجلس اثاثہ جات دعوت اسلامی کے مطابق یہاں دعوت اسلامی کے تحت مساجد،مدارس المدینہ وجامعات المدینہ وغیرہ عمارات اورپلاٹ کی کل تعداد26ہے ۔جوعمارات پایہ تکمیل تک پہنچ چکی ہیں وہ 12، جو زیرتعمیر ہیں وہ 5 ، اور خالی پلاٹ کی تعداد 9ہے ۔٭یہاں اسلامی بہنوں کے17ہفتہ واراجتماعات ہوتے ہیں جن میں 227اسلامی بہنیں ہرہفتے شرکت کرتی ہیں ۔٭مدرسۃ المدینہ بالغات کی تعداد19ہے جن میں بڑی عمرکی 153،اسلامی بہنیں پڑھتی ہیں ۔

تحصیل ہارون آبادکا تعارف:

تحصیل ہارون آباد (Haroonabad) میں دو سٹی ہارون آباد ، فقیروالی اور 22 یونین کونسلیں ہیں۔یہ بہاولنگر سے جانب جنوب 48 کلومیٹر دور ہے ۔ پہلے یہاں ایک گاؤں بدرو والا(Badru Wala)تھا پھراس علاقے میں نہری نظام قائم ہونے کے بعد 1927ء میں یہاں غلہ منڈ ی اور دوکانیں قائم کرکے اسے ہارون آبادکانام دیا گیا۔ 1934ء میں نواب صادق محمد خان پنجم نے یہاں عظیم الشان مسجدتعمیرکی۔1960ء میں یہاں مزید دوکانیں اور بازار بنائے گئے۔قیام پاکستان کے وقت یہاں کی آبادی صرف سات ہزارلوگوں پر مشتمل تھی،یہاں ہند سے آنے والے کثیر مہاجرین آکر بس گئے۔اب اس کی آبادی 80 ہزار سے زائد ہوچکی ہے۔یہاں کئی فیکٹریاں، اسکولز، کالج، بہاولپور یونیورسٹی کا ذیلی کیمپس، ہسپتال ،کورٹ وغیرہ شہری تمام سہولیات موجودہیں ۔تحصیل ہارون آبادکی آبادی کم و بیش 3 لاکھ 75 ہزارہے جبکہ اس کا رقبہ 2 لاکھ 89 ہزار 61،ایکڑز بتایا جاتا ہے ۔

تحصیل ہارون آباد میں دعوتِ اسلامی کا دینی کام :

تحصیل ہارون میں دو مدنی مراکز٭فیضان مدینہ، الہاشم کالونی، نبیل ٹاؤن، ہارون آباد اور٭فیضان مدینہ، مدینہ ٹاؤن، 119 والہ موڑ، فقیر والی میں قائم ہیں۔ان دونوں مراکز میں عالم کورس کے لئے جامعۃ المدینہ بھی ہیں ۔اس کے علاوہ تحصیل ہارون آبادمیں 5مدارس المدینہ قائم کئے گئے ہیں ، جن میں طلبہ تعلیم قرآن حاصل کرتے ہیں ۔انکے مقامات یہ ہے : ٭ فیضانِ مدینہ، الہاشم کالونی، ہارون آبادسٹی٭جامع مسجدمحبوب، مدینہ کالونی ہارون آباد سٹی٭ میلاد چوک گلشن اقبال کالونی ہارون آباد سٹی٭چورنگی 119 والا ر وڈ، فقیر والی ٭چک نمبر 429۔119 والا روڈ، فقیر والی۔٭ہارون آباد سٹی میں بچیوں کا بھی ایک مدرسۃ المدینہ،الفیض کالونی،گلی نمبر1 میں قائم ہے۔٭مجلس اثاثہ جات دعوت اسلامی کے مطابق یہاں دعوت اسلامی کے تحت مساجد، مدارس المدینہ وجامعات المدینہ وغیرہ عمارات اورپلاٹ کی کل تعداد18ہے ۔جوعمارات پایہ تکمیل تک پہنچ چکی ہیں وہ 8،جو زیرتعمیر ہیں وہ 4 اور خالی پلاٹ کی تعداد 6ہے۔٭یہاں اسلامی بہنوں کے 9 ہفتہ وار اجتماعات ہوتے ہیں جن میں 152اسلامی بہنیں ہرہفتے شرکت کرتی ہیں ۔٭مدرسۃ المدینہ بالغات کی تعداد1ہے جن میں بڑی عمرکی 18 اسلامی بہنیں پڑھتی ہیں ۔

تحصیل منچن آباد کا تعارف:

تحصیل منچن آباد(Minchinabad)میں تین سٹی منچن آباد،میکلوڈ گنج، منڈی صادق گنج اور 20 یونین کونسلز شامل ہیں ۔یہ بہاولنگر سے جانب شمال 37 کلومیٹر فاصلے پر ہے ۔ سٹی منچن آباد کی بنیاد1867ء میں رکھی گئی ۔یہ نہرفور ڈواہ(fordwah canal) کے کنارے واقع ہے ۔اس میں دو مین بازا راور چار دروازے جنوب میں بیکانیری دروازہ، شمال میں لاہوری دروازہ، مغرب میں بہاولپوری دروازہ اورمشرق میں دہلی دروازہ تعمیرکیاگیا ۔1919ء میں یہ ترقی یافتہ شہر بن چکا تھا اس میں کئی دفاتر، ڈاکخانہ، ریلوے اسٹیشن اور ٹیلی گرام آفس موجودتھے ۔ سٹی منچن آبادکی آبادی 35 ہزار سے زائد افراد پر مشتمل ہے جبکہ تحصیل منچن آبادکی آبادی تقریباً 3 لاکھ 50 ہزار ہے اور رقبہ 4 لاکھ 29 ہزار 880،ایکڑزبتایاجاتاہے ۔

تحصیل منچن آباد میں دعوتِ اسلامی کا دینی کام :

تحصیل منچن آباد میں تین مدنی مراکز٭فیضان مدینہ محلہ اسماعیل آباد،نزد پرانی سبزی منڈی، حویلی لکھا روڈ منچن آباد ٭فیضان مدینہ نزد ریلوے پھاٹک منڈی، باڈر موڑ صادق گنج اور٭فیضان مدینہ نزدہائی اسکول میکلوڈ گنج قائم ہیں۔ان تینوں مدنی مراکز میں طلبہ کو تعلیم قرآن سے آراستہ کرنے کے لئے مدارس المدینہ موجود ہیں ،اس کے علاوہ مدرسۃ المدینہ غفاریہ میکلوڈ گنج میں مقیم وغیرمقیم دونوں قسم کے طلبہ تعلیم قرآن میں مصروف ہیں ۔ ٭مجلس اثاثہ جات دعوت اسلامی کے مطابق یہاں دعوت اسلامی کے تحت مساجد،مدارس المدینہ وجامعات المدینہ وغیرہ عمارات اورپلاٹ کی کل تعداد34ہے، جوعمارات پایہ تکمیل تک پہنچ چکی ہیں وہ 11، جو زیرتعمیر ہیں وہ 12، اور خالی پلاٹ کی تعداد 11ہے ۔٭یہاں اسلامی بہنوں کے 11ہفتہ واراجتماعات ہوتے ہیں جن میں 282اسلامی بہنیں ہرہفتے شرکت کرتی ہیں ۔٭مدرسۃ المدینہ بالغات کی تعداد6ہے جن میں بڑی عمرکی 74اسلامی بہنیں پڑھتی ہیں ۔

تحصیل فورٹ عباس کا تعارف :

تحصیل فورٹ عباس(Fort Abbas)دو قصبوں کچھی والا،مروٹ اور 16 یونین کونسل پر مشتمل ہے جو بہاولنگر شہر سے جانب جنوب 105کلومیڑکے فاصلے پر واقع ہے ۔ہارون آباد روڈ اسے بہاولنگرسے ملاتی ہے ۔فورٹ عباس سٹی قدیم دریا ہاکڑہ کے کنارے آبادہوا۔سلطان محمودغزنوی نے یہاں قلعہ پھولڑہ تعمیرکروایا ،شہرکی قدیم آبادی اسی قلعےکے اردگردتھی۔1904ء میں دریائے ہاکڑہ کے بائیں جانب کالونی تعمیرکی گئی تو یہ شہر ترقی کرنے لگا۔نہری نظام کے قائم ہونے سے اس کی آبادی میں اضافہ ہوا۔1927ء میں یہاں اجناس کی منڈی بنائی گئی ۔اس کے بعد یہاں تھانہ،ہسپتال ،اسکولز اور کالج وغیرہ بنتے چلے گئے ۔اب اس شہر کی آبادی 47ہزارہے ۔ فورٹ عباس سے تین میل جانب مغرب چولستان کا وسیع ریگستان شروع ہوجاتا ہے۔کچھی والا اور مروٹ اس کے اہم قصبے ہیں۔تحصیل فورٹ عباس کی کل آبادی 3 لاکھ کے قریب ہے، جبکہ اس کا رقبہ 2 لاکھ 54 ہزار 113، ایکڑز بتایا جاتا ہے ۔

تحصیل فورٹ عباس میں دعوتِ اسلامی کا دینی کام :

تحصیل فورٹ عباس میں دو مدنی مراکز ٭ فیضان مدینہ طفیل ٹاؤن نزدلاری اڈا فورٹ عباس اور٭فیضان مدینہ سیٹلائٹ ٹاؤن یز مان روڈ مروٹ قائم ہیں ۔ اول الذکرمیں جامعۃ المدینہ اورمدرسۃ المدینہ اورثانی الذکر میں مدرسۃ المدینہ قائم کیا گیا ہے ۔اس کے علاوہ٭ مدرسۃ المدینہ اشرف کالونی کھچی والا ٭مدرسۃ المدینہ چک نمبر 6/230 اور٭ مدرسۃ المدینہ چک نمبر 6r/230 اڈا شہباز والا فیضان قرآن کو عام کرنے میں مصروف عمل ہیں۔٭مجلس اثاثہ جات کے مطابق یہاں دعوت اسلامی کے تحت مساجد،مدارس المدینہ وجامعات المدینہ وغیرہ عمارات اورپلاٹ کی کل تعداد14ہے۔جوعمارات پایہ تکمیل تک پہنچ چکی ہیں وہ 3، جو زیر تعمیر ہیں وہ 4 اور خالی پلاٹ کی تعداد 7 ہے۔٭یہاں اسلامی بہنوں کے 12ہفتہ واراجتماعات ہوتے ہیں جن میں 230اسلامی بہنیں ہرہفتے شرکت کرتی ہیں۔ ٭مدرسۃ المدینہ بالغات کی تعداد6ہے جن میں بڑی عمرکی 53 اسلامی بہنیں پڑھتی ہیں ۔


تحریر: محمد آصف اقبال مدنی

خانہ کعبہ کا ہر حصہ ہر گوشہ لاتعداد برکات و فضائل کا منبع ومرکز ہے، انوار وتجلیات ہمہ وقت اس پر برستے رہتے ہیں، خوش نصیب زائرینِ بیت اللہ ان فیوض و برکات سے خوب مستفیض ہوتے ہیں، اپنے دامن کودینی ودنیاوی فوائد وثمرات سے بھرتے ہیں اور اپنے جسمانی و روحانی سکون و راحت کا بھرپور سامان کرتے ہیں۔اس مختصر تحریر میں بیت اللہ شریف کے صرف ایک کونے "رکنِ یمانی" کا تذکرۂ خیر کرتے ہیں۔

٭رکنِ یَمانی: یہ یمن کی جانب خانہ کعبہ کا مغربی کونہ ہے۔ (رفیق الحرمین،ص 61)

٭رکنِ یَمانی کو یہ عظمت حاصل ہے کہ یہ بنیاد ابراہیمی پر ہے۔(مراۃ المناجیح،4/183)

٭رکنِ یمانی کی عظمت کے لئے اتنا کافی ہے کہ حضور نبی پاک صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم رکن یمانی کا استلام کرتے، اسے بوسہ دیتے اور اپنا رُخسارِ پُرانوار اس پر رکھ دیتے تھے۔(المستدرک، 2/107، حدیث:1718، 1719)

٭رکنِ یَمانی کی یُمن و برکت سے ہے کہ یہ خطاؤں کو مٹاتا ہے، رسول اللہ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے فرمایا: حجر اسود اور رکنِ یَمانی دونوں خطاؤں کو مٹاتے ہیں۔ (تر مذی ،2/285،رقم:961)

٭یہاں آنسو بہانا سنت ہے اور اس رکن کا استیلام کرنا روز محشر کام آئے گا۔ رحمتِ عالم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے ارشاد فرمایا: حجرِ اسود اور رکنِ یمانی دونوں قيامت کے دن اٹھائے جائيں گے تو ان کی دو آنکھيں ، ایک زبان اور دو ہونٹ ہوں گے، جس نے ان کا صحيح طريقے سے استلام کياہو گا يہ اس کے حق ميں گواہی ديں گے۔(معجم کبیر،11/146، حدیث:11432)حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم حجرِ اسود کے پاس تشریف لائے پھر اس پر اپنے مبارک ہونٹ رکھ کر دیر تک روتے رہے، پھر آپ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے ملاحظہ فرمایاکہ حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ بھی رورہے ہیں توآپ نے ارشاد فرمایا : اے عمر! یہ وہ جگہ ہے جہاں آنسو بہانے چاہییں ۔

٭اس کا عظیم وفضیلت والا ہونا یوں بھی عیاں ہے کہ یہ جنتی یاقوت ہے۔ رسول پاک صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے فرمایا: رکنِ یمانی اور مقامِ ابراہيم جنت کے ياقوتوں میں سے دو ياقوت ہيں، اور يہ کہ اللہ پاک نے ان کا نور بجھا ديا اگر ايسا نہ ہوتا تو مشرق و مغرب ہر شے روشن ہو جاتی۔ (صحیح ابن حبان،6/10، حدیث:3702)

٭مولائے کریم اس رکنِ عظیم کی زیارتِ عمیم سے نوازے، وہاں بخشش و عافیت مانگنے کا موقع بہت بڑی سعادت ہے۔حضور نبی کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے فرمایا: رکنِ يمانی پر 70,000 فرشتے مؤکل ہيں،جوبھی يہ دعا مانگتا ہے: اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اَسْئَلُکَ الْعَفْوَ وَ الْعَافِيَۃَ فِی الدِّين وَ الدُّنْيا رَبَّنَآ اٰتِنَا فِی الدُّنْيا حَسَنَۃً وَّ فِی الْاٰخِرَۃِ حَسَنَۃً وَّ قِنَا عَذَابَ النَّارِ (یعنی اے اللہ پاک ! میں تجھ سے دين و دنيا میں بخشش اور عافيت کا سوال کرتا ہوں، اے ہمارے رب!ہميں دنيا و آخرت میں بھلائی عطا فرما اور ہميں جہنم کے عذاب سے بچا) تووہ فرشتے اس کی دعا پر آمین کہتے ہيں۔ (سنن ابن ماجۃ، 3، ص 439، حدیث:2957)

٭اس عالی شان مقام پر کی جانے والی خاص دعا پر آمین کہنے کو خاص فرشتہ مقرر ہے۔ رسول اکرم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے ارشاد فرمایا: اللہ پاک نے زمین وآسمان کی پیدائش کے وقت سے رکْنِ یمانی پر ایک فرشتہ مقرر کر رکھا ہے۔ جب تم وہاں سے گزرو تو یہ دعاکیاکرو کیونکہ وہ فرشتہ اٰمین کہتا ہے: رَبَّنَا اٰتِنَا فِی الدُّنْيَا حَسَنَةً وَّفِی الْاٰخِرَةِ حَسَنَةً وَّقِنَا عَذَابَ النَّار یعنی اے ہمارے رب! ہمیں دنیا میں بھی بھلائی عطافرمااورآخرت میں بھی بھلائی عطا فرمااور ہمیں آگ کے عذاب سے بچا۔ (حلیۃ الاولیا،5/ 95، حدیث:6457)

٭رکن یمانی پر فرشتوں کی کثرت کی گواہی ان کے سردار جبریل امین علیہ السلام نے بھی دی ہے۔ ایک بار حضرت جبریل علیہ السلام بارگاہ رسالت صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم میں یوں حاضر ہوئے کہ انہوں نے سبز رنگ کا عمامہ شریف باندھا ہوا تھا جس پر کچھ غبار تھا۔ رسولِ پاک صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے ان سے پوچھا: آپ کے عمامے پر غبار کیسا ہے؟ حضرت جبریلِ امین علیہ السلام نے عرض کی: میں کعبۃ اللہ کی زیارت کو حاضر ہوا تھاتو رکنِ یمانی پر فرشتوں کا اِزدِحام تھا یہ ان کے پروں سے اڑنے والا غبار ہے۔ (اخبار مکہ للازرقی،ج1، ص35۔ الحبائک فی اخبار الملائک ، ص186)


اعلیٰ حضرت اعلیٰ سیرت

Mon, 11 Sep , 2023
251 days ago

ایک مرتبہ ایک استاذ صاحب بچوں کو پڑھا رہے تھے کہ اتنے میں ایک بچے نے آکر سلام کیا جس پر استاذ صاحب کی زبان سے نکلا ”جیتے رہو“ بچوں میں موجود ایک علمی گھرانے سے تعلق رکھنے والے بچے نے عرض کیا: یہ سلام کا جواب تو نہیں!وعلیکم السلام کہنا چاہیئے، یہ سن کر استاذ صاحب بہت خوش ہوئے اور اُس بچے کو دعاؤں سے نوازا۔

یہ بچہ کوئی اور نہیں بلکہ اپنے وقت کے امام، مترجمِ قراٰن،امامِ اہلسنت، مجددِ دین و ملت، ماحی بدعت، شیخ المسلمین اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان فاضلِ بریلوی رحمۃ اللہ علیہ کی ذاتِ مبارکہ تھی۔آپ رحمۃ اللہ علیہ کی شخصیت کسی تعارف کی محتاج نہیں، آپ دنیا بھر میں اہلسنت و جماعت کے بہت بڑے امام و مُقْتَدَا (جس کی اقتدا کی جائے) اور مذہب و ملت کے محافظ کی حیثیت سے پہچانے جاتے ہیں۔

ولادتِ باسعادت

اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان فاضلِ بریلوی رحمۃ اللہ علیہ 10 شوال المکرم1272ھ بمطابق 14جون 1856ء کو ہند کے مشہور و معروف شہر بریلی میں واقع محلہ جسولی میں پیدا ہوئے۔ آپ رحمۃ اللہ علیہ کا پیدائشی نام محمد اور تاریخی نام المختار ہے جبکہ آپ کے جدِّ امجد مولانا رضا علی خان رحمۃ اللہ علیہ نے آپ کا نام احمد رضا رکھا۔(سیرتِ امام احمد رضا خان قادری، 94)

آپ رحمۃ اللہ علیہ بچپن ہی سے ذہین و فطین اور اعلیٰ اخلاق و سیرت کے مالک تھے ۔بچپن ہی سے دینِ اسلام کی تعلیمات پر عمل کرنا، بزرگوں کا ادب کرنا اور ساداتِ کرام (آلِ رسول) کا احترام کرنے سمیت دیگر ایسے کثیر واقعات سے آپ رحمۃا للہ علیہ کی زندگی بھری ہوئی ہے نیز اللہ پاک نے آپ کو بےشمار علمی صلاحیتوں سےبھی نوازا تھا جن پر آ پ کی تصانیف اور فتویٰ جات گواہ ہیں۔

جس کے لئے روزہ رکھا ہے وہ تو دیکھ رہا ہے

ایک مرتبہ رمضان المبارک کا مقدس مہینہ جاری و ساری تھا، اعلیٰ حضرت فاضلِ بریلوی رحمۃ اللہ علیہ کی پہلی روزہ کشائی کی تقریب کا سلسلہ تھا، ایک کمرے میں فیرنی کے پیالےجمانے کے لئے رکھے ہوئے تھے۔سخت گرمی ہونے کے باوجود اعلیٰ حضرت نے کم عمری میں بھی بڑی خوش دلی سے روزہ رکھا تھا۔ دوپہر کے وقت اعلیٰ حضرت کے والدِ محترم آپ کو اُس کمرے میں لے گئے اور دروازہ بند کر کے فیرنی کا ٹھنڈا پیالہ اٹھا کر دیا اور کہا کہ اسے کھالو۔اعلیٰ حضرت نے اپنے والدِ محترم سے کہا کہ میرا تو روزہ ہےکیسے کھاؤں؟والدِ محترم نے فرمایا: بچوں کا روزہ ایسا ہی ہوتا ہے، لو کھالو، کمرہ بند ہے، کوئی دیکھنے والا بھی نہیں ہے۔اس پر اعلیٰ حضرت عرض گزار ہوئے:”جس کے لئے روزہ رکھا ہے وہ تو دیکھ رہا ہے “، والدِ محترم آپ کی باتین سن کر آبْ دِیْدَہْ ہو گئے(آنکھوں میں آنسو آگئے) ، انہوں نے اللہ پاک کا شکر ادا کیاکہ جس کو کم عمری میں اپنے وعدے کو پورا کرنے کا اتنا لحاظ ہو وہ بچہ اپنے رب سے کئے ہوئے عہد (وعدے) کو کبھی فراموش نہیں کرے گا۔(سیرتِ اعلیٰ حضرت معہ کرامات، 90)

مریض ہوں تو علاج نہ کروں؟

اعلیٰ حضرت رحمۃ اللہ علیہ کے متعلق کہا جاتا ہے:نہ ان کے کسی بڑے کی زبانی سنا، نہ ہی کسی برابر والے(ہم عمر)نے بتایااور نہ ہم چھوٹوں نے اعلیٰ حضرت کو کبھی ماہِ مبارک کا کوئی روزہ قضا کرتے ہوئے دیکھا۔بعض مرتبہ اعلیٰ حضرت ماہِ مبارک میں بیمار ہوئے مگر انہوں نے روزہ نہیں چھوڑا۔کسی نے عرض کی کہ ایسی حالت میں روزہ رکھنے سے کمزوری اور بڑھ جائےگی تو ارشاد فرمایا کہ مریض ہوں تو علاج نہ کروں؟لوگوں نے تعجب سے کہا: کہ روزہ بھی کوئی علاج ہے؟ تو ارشاد فرمایاکہ علاج کا توڑہے، میرے آقا صلی اللہ علیہ و سلم کا بتایا ہوا اکسیر ہے۔آپ صلی اللہ علیہ و سلم فرماتے ہیں:صوموا تصحوا روزہ رکھو صحتیاب ہو جاؤ گے۔(سیرتِ اعلیٰ حضرت معہ کرامات، 91)

اس سے معلوم ہوا کہ اعلیٰ حضرت بچپن ہی سے اللہ عزوجل اور اس کے آخری نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ و سلم کے حکم پر عمل کرنے والے اعلیٰ اخلاق کے مالک تھے کہ عام طور پر بچوں میں ان چیزوں کا زیادہ رجحان نہیں ہوتا لیکن قربان جائیں میرے اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان پر کہ بیماری کے عالم میں بھی روزہ نہ چھوڑا ۔

حسنِ اخلاق کا اعلیٰ درس

آپ رحمۃ اللہ علیہ کے اعلیٰ اخلاق کا اندازہ اُس واقعہ سے لگایا جاسکتا ہے جب ایک کم سن بچے نے اعلیٰ حضرت کو اپنے گھر کھانے کی دعوت دی ۔اس پر اعلیٰ حضرت نے مزاحاً پوچھا:دعوت میں کیا کھلاؤ گے؟کم سن بچے نے اپنے ہاتھ میں پکڑے کُرتے کے دامن کو پھیلایا جس میں ماش کی دال اور مرچیں تھیں، اور کہا دیکھئے نا یہ لایاہوں۔اعلیٰ حضرت نے اُس بچے کے سر پر دستِ شفقت رکھا اور دعوت قبول کرتے ہوئے فرمایا:کہ میں اور حاجی کفایت اللہ صاحب آئیں گے ۔

اگلے روز وقتِ مقررہ پر اعلیٰ حضرت حاجی کفایت اللہ صاحب کے ہمراہ اُس کم سن بچے کے گھر(جو کہ بریلی شہر کے محلہ ملوکپور میں واقع تھا) پہنچے ۔اعلیٰ حضرت اور حاجی کفایت اللہ صاحب کچھ دیر گھرکے باہر کھڑے رہے۔ اس کے بعد ایک بوسیدہ چٹائی آئی اورایک ڈلیا(مونج یا کھجور کے پتّوں کی بنی ہوئی چھوٹی ٹوکری) میں باجرہ کی گرم گرم روٹیاں آئیں،مٹی کے برتن میں ماش کی دال آئی جس میں مرچوں کے ٹکڑے ٹوٹے ہوئے پڑے تھے۔کھانے کے دوران حاجی کفایت اللہ صاحب کے دل میں خیال آیا کہ گھر پر تو اعلیٰ حضرت کے کھانے میں احتیاط کی جاتی ہے کہ چپاتی کے بجائے سوجی کا بسکٹ تناول فرماتے ہیں اور یہاں باجرہ کی روٹی اور ماش کی دال کھانا پڑی ہے مگرقربان جائیں میرےآقا اعلیٰ حضرت کے اخلاقِ کریمہ پر کہ میزبان کی خوشنودی اور اُس کا دل رکھنے کے لئے پوری توجہ کے ساتھ کھانا کھا رہے ہیں۔(سیرتِ اعلیٰ حضرت معہ کرامات، 97تا 98)

اس واقعہ میں اعلیٰ حضرت نے اپنے چاہنے والوں کو حسنِ اخلاق کا کیسا اعلیٰ درس دیا ہے کہ ہمیں ہر ایک کے ساتھ حسنِ سلوک کرنا چاہیئےچاہے وہ چھوٹا ہو یا بڑا، نیز معلوم ہوا کہ آپ کا علمی مقام جس قدر بلند تھا بلکل اسی طرح آپ کے اخلاقِ کریمہ بھی بلند و بالا تھے۔

سیّد صاحب کے حکم کی تعمیل

اعلیٰ حضرت سمیت آپ کا پورا خاندان ساداتِ کرام (آلِ رسول) کی عزت و عظمت اور اُن سے بےحد محبت کرنے والا مشہور گھرانہ تھا۔ آپ کے آبا و اجداد اکثر ساداتِ کرام کی خیریت معلوم کرنے اور انہیں سلام کرنے جایا کرتے تھے اور انہیں اپنی دعوتوں میں شریک کرتے تھے۔ ایک بار اعلیٰ حضرت نے کسی سبب سےکھانا چھوڑ دیا اور صرف ناشتہ پر قناعت کرنے لگے۔سارے خاندان اور اُن کے احباب نے بڑی جد و جہد کی کہ اعلیٰ حضرت کھانا شروع کردیں لیکن ان سب کی کوشش رائیگاں گئی تو وہ سب سیّد مقبول صاحب کی خدمت میں حاضر ہوئے اور عرض کیا کہ آج دو مہینے ہو گئے ہیں، اعلیٰ حضرت نے کھانا چھوڑ دیا ہے، ہم سب کوشش کرکے تھک گئے ہیں اب آپ ہی انہیں سمجھا سکتے ہیں۔اس پر سیّد مقبول صاحب نے اپنے گھر والوں سے کھانا تیار کروایا اور خود اعلیٰ حضرت کے پاس تشریف لے گئے، جب اعلیٰ حضرت کو سیّد صاحب کے آنے کی اطلاع ملی تو فوراً کمرے سے باہرچلے آئےاور سیّد صاحب سے قدم بوس ہوئے ۔سیّد مقبول صاحب نے فرمایا : میں نے سنا ہے کہ آپ نے کھانا چھوڑ دیا ہےتو اعلیٰ حضرت نے کہا کہ میں تو روز کھاتا ہوں، میرے معمولات میں اب تک کوئی فرق نہیں پڑا، میں اپنا کام بدستور کر رہا ہوں، مجھے اس سے زیادہ کی ضرورت نہیں اس پر سیّد مقبول صاحب برہم ہوگئے اور کھڑے ہو کر فرمانے لگے اچھا تو میں کھانا لے جاتا ہوں، کل بروزِ قیامت میں سرکارِ دوعالم صلی اللہ علیہ و سلم کا دامن پکڑ کر عرض کروں گا کہ ایک سیّدہ نے بڑے شوق سے کھانا پکایا اور ایک سیّد لے کر آیا مگر آپ کے احمد رضا نے کسی طرح نہ کھایا۔یہ سن کر اعلیٰ حضرت کانپ گئے اور عرض کیا کہ میں تعمیلِ حکم کے لئے حاضرہوں،ابھی کھالیتا ہوں۔سیّد صاحب نے اعلیٰ حضرت سے وعدہ لیا کہ اب عمر بھر کھانا نہیں چھوڑو گے چنانچہ اعلیٰ حضرت نے عمر بھر کھانا نہ چھوڑنے کا وعدہ کیا تو سیّد صاحب اعلیٰ حضرت کو کھانا کھلا کر خوشی خوشی تشریف لے گئے۔( سیرتِ اعلیٰ حضرت معہ کرامات، 94 تا 95)

ساداتِ کرام کا ادب و احترام جزءِ رسول ہونے کی حیثیت سے

ساداتِ کرام کا اس قدر ادب و احترام کرنے کے متعلق تلمیذِ اعلیٰ حضرت، ملک العلماء حضرت علامہ محمد ظفر الدین بہاری رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: علمائے دین نے اپنی مستند کتابوں میں اس بات کی تصریح فرمائی ہے کہ حضور خاتم النبیین صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت و تعظیم میں سے ہے کہ ہر وہ چیز جس کو حضور سے نسبت ہو جائے اُس کی تعظیم و توقیر کی جائے۔ساداتِ کرام جزءِ رسول ہونے کی وجہ سے سب سے زیادہ مستحقِ توقیر و تعظیم ہیں اور اس پر پورا عمل کرنے والا میں نے اعلیٰ حضرت قدس سرہ العزیز کو پایا ہے، اس لئے کہ کسی سیّد صاحب کو اعلیٰ حضرت اُس کی ذاتی حیثیت سے نہیں دیکھتے بلکہ اس حیثیت سے دیکھتے ہیں کہ وہ سرکارِ دوعالم صلی اللہ علیہ و سلم کا جز ہیں۔(حیاتِ اعلیٰ حضرت 1، 179)

اعلیٰ حضرت کے زندگی کا ہر ایک پہلو ہمارے لئے ایک بہترین نمونہ ہے، اللہ پاک ہمیں بھی اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان فاضلِ بریلوی رحمۃ اللہ علیہ کی اعلیٰ سیرت اور اُن کے فرامین پر عمل کرتے ہوئے زندگی گزارنے کی توفیق عطا فرمائے۔آمین

از: غیاث الدین مدنی (اسلامک ریسرچ سینٹر دعوتِ اسلامی)


شراب کسے کہتے ہیں ؟ لغت میں پینے کی چیز کو شراب کہتے ہیں اور اصطلاح فقہا میں شراب اسے کہتے ہیں جس سے نشہ ہوتا ہے ، اس کی بہت قسمیں ہیں ، خمر، انگور کی شراب کو کہتے ہیں یعنی انگور کا کچا پانی جس میں جوش آ جائے اور شدت پیدا ہو جائے ۔ امامِ اعظم ابو حنیفہ رحمۃُ اللہِ علیہ کے نزدیک یہ بھی ضروری ہے کہ اس میں جھاگ پیدا ہو اور کبھی ہر شراب کو مجازاً خمر کہہ دیتے ہیں ۔[A]

شراب کا حکم:رسولِ اَکرم صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم کے پاس ایک مَٹکے میں جوش مارتی ہوئی (نشہ آور) نبیذ لائی گئی تو آپ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم نے ارشاد فرمایا:اسے دیوار پر دے مارو کیونکہ یہ اس شخص کا مشروب ہے جو اللہ اور یومِ آخرت پر ایمان نہیں رکھتا۔[B]حضور نبی رحمت صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلمکا فرمان ہے: ہر نشہ آور چیز شراب ہے اور ہر نشہ آور چیز حرام ہے ۔[C]ایک روایت میں آپ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلمکا ارشاد ہے:ہر نشہ آور چیز شراب ہے اور ہر شراب حرام ہے ۔[D]

شراب کی کمائی کا حکم: جس طرح شراب کا پینا حرام ہے اسی طرح اس کا بیچنا اور اس کی کمائی کھانا بھی حرام ہے۔ چنانچہ نبی کریم صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلمکا ارشاد ہے: اللہ پاک نے شراب اور اس کی کمائی ، مردار اور اس کی کمائی، خنزیر اور اس کی کمائی کو حرام قرار دیا ہے۔[E]دوسری حدیث میں ہے:جب اللہ پاک کسی قوم پر کوئی چیز حرام کرتا ہے تو اس کی کمائی بھی ان پر حرام کر دیتا ہے۔[F]

خمر کی حرمت نص قطعی سے ثابت ہے: خمر حرام بعینہٖ ہے اس کی حرمت نصِ قطعی سے ثابت ہے اور اس کی حرمت پر تمام مسلمانوں کا اجماع ہے اس کا قلیل و کثیر سب حرام ہے اور یہ پیشاب کی طرح نجس ہے اور اس کی نجاست غلیظہ ہے جو اس کو حلال بتائے کافر ہے کہ نصِ قرآنی کا منکر ہے مسلم کے حق میں یہ مُتَقَوِّم نہیں یعنی اگر کسی نے مسلمان کی یہ شراب تلف (ضائع) کر دی تو اس پر ضمان(تاوان) نہیں اور اس کو خریدنا صحیح نہیں۔[G]

شراب سے کسی قسم کا فائدہ اٹھانا جائز نہیں: شراب سے کسی قسم کا انتفاع جائز نہیں نہ دوا کے طور پر استعمال کر سکتا ہے نہ جانور کو پلا سکتا ہے نہ اس سے مٹی بھگا سکتاہے نہ حقنہ کے کام میں لائی جا سکتی ہے ۔ جانوروں کے زخم میں بھی بطور علاج اس کو نہیں لگا سکتے۔[H]

شراب کے متعلق آٹھ احکام: ملا احمد جیون حنفی رحمۃُ اللہِ علیہ نے ’’تفسیراتِ احمدیہ‘‘ میں خمر (شراب) کے بارے میں آٹھ احکام ذکر کئے ہیں ۔ جو یہ ہیں :

(1) ہمارے نزدیک خمر (انگور کی شراب) بعینہ حرام ہے ۔ اس کی حرمت نشہ پر موقوف ہے نہ نشہ اس کے حرام ہونے کی علت ہے ۔ بعض لوگوں کا خیال ہے کہ اس کا نشہ حرام ہے کیونکہ یہی فساد کا باعث بنتا ہے اور اللہ کی یاد اور نماز سے روکتا ہے ۔ یہ خیال ہمارے نزدیک کفر ہے کیونکہ یہ کتاب الٰہی کا انکار ہے اللہ تعالیٰ نے خمر کو رِجْس کہا ہے اور رِجْس حرام لِعَیْنِہٖ ہوتا ہے اسی پر امت کا اجماع ہے اور سنت سے بھی یہی ثابت ہے ۔ لہٰذا خمر حرام لِعَیْنِہٖ ہے ۔

(2) شراب پیشاب کی طرح نجاستِ غلیظہ ہے کیونکہ یہ دلیل قطعی سے ثابت ہے ۔

(3) مسلمان کے لئے اس کی کوئی قیمت نہیں یعنی اگر کوئی شخص کسی مسلمان کی شراب ضائع کر دے یا غصب کر لے تو اس پر کوئی ضمان نہیں ، اس کی خرید و فروخت جائز نہیں کیونکہ اللہ پاکنے اہانت کی وجہ سے اسے نجس قرار دیا ہے لہٰذا اس کی قیمت لگانا گویا اسے عزت دینا اور اہانت سے نکالنا ہے ۔

(4) شراب سے نفع اٹھانا حرام ہے کیونکہ یہ نجس ہے اور نجس شے سے نفع حرام ہوتا ہے اور اللہ پاک نے بھی اس سے اجتناب کا حکم دیا ہے ۔

(5) شراب (خمر) کو حلال جاننا کفر ہے کیونکہ یہ دلیل قطعی کا انکار ہے ۔

(6) شراب پینے والے پر حد جاری ہو گی خواہ اسے نشہ نہ بھی ہو ۔ خمر کے علاوہ دیگر میں نشہ کی قید ہے ۔

(7) شراب بننے کے بعد مزید پکانے سے اس میں فرق نہیں پڑتا یعنی یہ بدستور حرام ہی رہتی ہے ۔

(8) البتہ! ہمارے (یعنی احناف کے) نزدیک اسے سرکہ میں تبدیل کرنا جائز ہے۔ [I]

شراب نوشی کی حرمت پر دس دلائل:علامہ شامی رحمۃُ اللہِ علیہ نے شراب کی حرمت پر دس دلائل ذکر کئے ہیں ۔ جو یہ ہیں :

(1) … شراب کا ذکر جوئے بت اور جوئے کے تیروں کے ساتھ کیا ہے اور یہ سب حرام ہیں ۔

(2) … شراب کو ناپاک فرمایا اور ناپاک چیز حرام ہوتی ہے ۔

(3) … شراب کو عملِ شیطان فرمایا اور شیطانی عمل حرام ہے ۔

(4) … شراب سے بچنے کا حکم دیا اور جس سے بچنا فرض ہو اس کا ارتکاب حرام ہے ۔

(5) …فلاح (کامیابی) کو شراب سے بچنے کے ساتھ مشروط ٹھہرایا ۔ اس لیے اجتناب فرض اور ارتکاب حرام ہوا ۔

(6)…شراب کے سبب سے شیطان آپس میں عداوت (دشمنی) ڈالتا ہے اور عداوت حرام ہے اور جو حرام کا سبب ہو وہ بھی حرام ہی ہے ۔

(7) … شراب کے سبب سے شیطان بغض (نفرت) ڈالتا ہے اور بغض حرام ہے ۔

(8) … شراب کے سبب شیطان اللہ کے ذکر سے روکتا ہے اور اللہ پاک کے ذکر سے روکنا حرام ہے ۔

(9) …شراب کے سبب شیطان نماز سے روکتا ہے اور جو نماز سے رکاوٹ کا سبب ہو اس کا ارتکاب حرام ۔

(10) …اللہ پاک نے اِستفہامیہ (سوالیہ) انداز میں شراب سے منع فرمایا کہ کیا تم باز آنے والے نہیں ہو، اس سے بھی حرمت کا پتا چلتا ہے ۔[J]

شراب نوشی کے دس نقصانات:(1)یہ بندے کی عقل میں فتور ڈال دیتی ہے اِس طرح وہ بچو ں کے لئے تماشااور مذاق بن جاتاہے۔ امام ابن ابی الدنیا رحمۃُ اللہِ علیہ فرماتے ہیں : میں نے ایک شرابی کوپیشاب کرتے ہوئے دیکھا وہ اپنے منہ پر پیشاب مل رہاتھا اور کہہ رہاتھا : ’’یاالٰہی! مجھے کثرت سے تو بہ کرنے والوں اور پاکیز ہ رہنے والوں میں شامل فرما۔ ‘‘(2)یہ مال کو ضائع اور بر باد کرتی ہے اور تنگدستی کا سبب بنتی ہے جیسا کہ حضرت عمر فاروق رضی اللہُ عنہ نے دعا مانگی: ’’یاالٰہی!ہمیں شراب کے بارے میں واضح حکم ارشاد فرمادے کیونکہ یہ مال کو برباد اور عقل کو ختم کردیتی ہے۔ ‘‘(3) یہ عداوت اور دشمنی کاسبب ہے۔ (4) شراب کھانے کی لذت اور درست کلام سے شرابی کو محروم کردیتی ہے۔ (5)بعض اوقات شراب، شرابی کی بیوی کو اس پر حرام کردیتی ہے او روہ زنا میں مبتلاہوجاتا ہے اس کی صورت یہ ہوتی ہے کہ شرابی نشہ میں مدہوش ہوکراکثر طلاق دے دیتا ہے اور بعض اوقات لاشعوری طور پر قسم توڑڈالتا ہے تو اپنی حرام کی ہوئی بیوی سے زنا کر بیٹھتا ہے۔(6) یہ ہر برائی کی کنجی ہے اور شرابی کو بہت سے گناہوں میں مبتلاکر دیتی ہے ۔(7) شراب نوشی شرابی کو بدکاروں کی مجلس میں لے جاتی ہے ،اپنی بد بو سے اُس کے کاتب فرشتو ں کوایذا دیتی ہے۔ (8) یہ شرابی پر آسمانوں کے دروازے بند کردیتی ہے ، چالیس دن تک نہ اِس کا کوئی عمل اُوپر پہنچتا ہے نہ ہی دُعا۔ (9)شراب(خمر) ، شرابی پر اَسّی کو ڑے واجب کردیتی ہے لہٰذا اگر وہ دنیا میں اِس سزا سے بچ بھی گیا تو آخرت میں مخلوق کے سامنے اُسے کوڑے مارے جائیں گے۔ (10) یہ شرابی کی جان اور ایمان کو خطرے میں ڈال دیتی ہے اِس لئے مرتے وقت اِیمان چِھن جانے کا خدشہ رہتاہے۔[K]

شراب نوشی کے طبی نقصانات: شراب کا سب سے زیادہ اثر جگر (Liver)پر پڑتا ہے اور وہ سُکڑنے لگتا ہے ، گُردوں پر اِضافی بوجھ پڑتا ہے جو بِالآخرنِڈھال ہو کر انجامِ کار ناکارہ (FAIL) ہو جاتے ہیں ، عِلاوہ ازیں شراب کے استِعمال کی کثرت دِماغ کو مُتَوَرَّم (یعنی سُوجن میں مُبتَلا) کرتی ہے ، اَعصاب میں سوزِش ہو جاتی ہے نتیجۃً اَعصاب کمزور اور پھر تباہ ہو جاتے ہیں ، شرابی کے مِعدہ میں سُوجن ہو جاتی ہے ، ہڈّیاں نرم اور خَستہ (یعنی بَہُت ہی کمزور) ہو جاتی ہیں ، شراب جسم میں موجود وٹامنز کے ذخائر کو تباہ کرتی ہے ، وٹامن BاورC اِس کی غار تگری کا بِالخصوص نشانہ بنتے ہیں ۔ شراب کے ساتھ ساتھ تمباکو نوشی کی جائے تو اِس کے نقصان دہ اثرات کئی گُنا بڑھ جاتے ہیں اور ہائی بلڈ پریشر، سٹروک اور ہارٹ اٹیک کا شدید خطرہ رہتا ہے ۔ بکثرت شراب پینے والا تھکن، سر درد، متلی اور شدّتِ پیاس میں مبتَلا رہتا ہے ۔ بے تحاشا شراب پی جانے سے دل اور عملِ تَنَفُّس (سانس لینے کا عمل) رُک جاتا اور شرابی فوری طور پر موت کے گھاٹ اُتر جاتا ہے ۔[L]زیادہ شراب نوشی سے عارضۂ قلب (Heart problem) ، فشارِ خون (Blood pressure) ، ذیابیطس (Sugar) ، جگر اور گردوں (Kidney) کے امراض پیدا ہوتے ہیں ۔



[A] فتاوی عالمگیری،5/409دار الفکر بیروت، در مختار، کتاب الاشربۃ، 10/32دار المعرفۃ بیروت

[B] حلیۃ الاولیاء، 6/159، حدیث:8148 دار الکتب العلمیہ بیروت

[C] مسلم،ص854، حدیث:5219 دار الکتاب العربی بیروت

[D] مسلم،ص855، حدیث:5221 دار الکتاب العربی بیروت

[E]ابو داود،3/386 ،حدیث:3485دار احیاء التراث العربی بیروت

[F]ترمذی،3/343،حدیث:1873 دار الفکر بیروت

[G]بہارشریعت،3/672،حصہ17،مکتبۃ المدینہ کراچی

[H]بہارشریعت،3/672،حصہ17،مکتبۃ المدینہ کراچی

[I] التفسیرات الاحمدیۃ، المائدۃ، مسئلۃ حرمۃ الخمرو المیسر، ص369 مکتبہ حقانیہ پشاور

[J]رد المحتار،10/33 دار المعرفۃ بیروت

[K]آنسوؤں کا دریا،ص 292مکتبۃ المدینہ کراچی

[L]برائیوں کی ماں،ص 39 ،40مکتبۃ المدینہ کراچی 

از: محمد گُل فراز مدنی (اسلامک ریسرچ سینٹر دعوتِ اسلامی)


اہل سنت کا عقیدہ ہے کہ ہمارے پیارے آقا ﷺ اپنے رب کے اذن و حکم سے دافع البلاء ہیں یعنی مسائل کو حل فرماتے ہیں بلاؤں کو دفع فرماتے ہیں اور اسیروں کے مشکل کشا ہیں، اس عقیدے کی دلیل یہ ہے کہ اللہ پاک نے قرآن مجید میں ارشاد فرمایا:

آیت نمبر 1۔ وَ مَا كَانَ اللّٰهُ لِیُعَذِّبَهُمْ وَ اَنْتَ فِیْهِمْؕ-(پ 9، الانفال: 33) ترجمہ: اللہ کہ یہ شان نہیں کہ انہیں عذاب دے جب تک اے حبیب تم ان میں تشریف فرما ہو۔ سبحٰن اللہ ہمارے حضور دافع البلاء ﷺ کفار پر سے بھی سبب دفعِ بلاء ہیں کہ مسلمانوں پر تو خاص رؤف رحیم ہیں۔

آیت نمبر 2۔ وَ لَوْ اَنَّهُمْ اِذْ ظَّلَمُوْۤا اَنْفُسَهُمْ جَآءُوْكَ فَاسْتَغْفَرُوا اللّٰهَ وَ اسْتَغْفَرَ لَهُمُ الرَّسُوْلُ لَوَجَدُوا اللّٰهَ تَوَّابًا رَّحِیْمًا(۶۴) (پ 5، النساء: 64) ترجمہ: اگر وہ اپنی جانوں پر ظلم کر بیٹھیں تو اے حبیب تمہاری بارگاہ میں حاضر ہوجائیں پھر اللہ سے معافی مانگیں اور رسول بھی ان کی مغفرت کی دعا فرمائیں تو ضرور اللہ کو بہت توبہ قبول کرنے والا مہربان پائیں۔ آیت کریمہ میں بالکل صاف واضح ہوا کہ حضور ﷺ کی بارگاہ میں حاضری سبب قبول توبہ و دفع بلائے عقاب ہے اور اس آیت مبارکہ سے حضور ﷺ کے دافع البلاء ہونے کا وصف رب کریم نے خود بیان فرمایا کہ وہ چاہے تو یونہی گناہ بخش دے مگر ارشاد فرمایا کہ اے لوگو! اگر اپنے گناہ معاف کروانا چاہو تو میرے محبوب کی بارگاہ میں آجاؤ اور پھر اگر میرے محبوب تمہارے لیے دعائے بخشش کردیں تو میں رب بھی تمہارے گناہ معاف فرمادوں گا۔ سیدی اعلیٰ حضرت کیا خوب فرماتے ہیں:

مجرم بلائے آئے ہیں جاءوک ہے گواہ پھر رد ہو کب یہ شان کریموں کے در کی ہے

آیت نمبر 3۔ وَ مَاۤ اَرْسَلْنٰكَ اِلَّا رَحْمَةً لِّلْعٰلَمِیْنَ(۱۰۷) (پ 17، الانبیاء: 107) ترجمہ: اور ہم نے تمہیں تمام جہاں کے لیے رحمت بنا کر ہی بھیجا۔ اس آیت مبارکہ میں فرمایا گیا کہ حضور ﷺ رحمت ہیں اور رحمت ہی وہ چیز ہوتی ہے جو سبب دفعِ بلا و زحمت ہوتی ہے۔

حدیث مبارکہ: حضرت انس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ کے زمانہ میں لوگوں کو سخت قحط سالی پہنچی تو جب نبی ﷺ خطبہ پڑھ رہے تھے جمعہ کے دن ایک دیہاتی اٹھا بولا: یا رسول اللہ مال برباد ہوگیا اور بچے بھوکے ہوگئے آپ ہمارے لیے اللہ سے دعا فرمائیں تو حضور ﷺ نے اپنے ہاتھ اٹھائے ہم آسمان میں بادل نہیں دیکھتے تھے، تو اس کی قسم جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے کہ حضور نے ہاتھ نیچے نہ کیے حتیٰ کہ بادل پہاڑوں کی طرح اٹھا پھر حضور اپنے منبر سے نہ اترے حتیٰ کہ میں نے آپ کی داڑھی پر بارش ٹپکتی دیکھی۔ (مراٰۃ المناجیح، جلد 8، حدیث: 590) اس طرح کی کئی روایات اس بات پر دلالت کرتی ہیں کہ حضور ﷺ دافع البلاء ہیں کہ کبھی کسی صحابی کا غزوہ میں بازو کٹ جاتا ہے تو وہ حضور کی بارگاہ میں حاضر ہوجاتے ہیں حضور اپنا لعاب دہن لگا کر ان کے بازو کو درست فرماتے ہیں اور انہیں اس بلاء سے نجات بخشتے ہیں، اسی طرح کسی صحابی کی تیر لگنے سے آنکھ نکل جاتی ہے تو وہ حضور کی بارگاہ میں حاضر ہوجاتے ہیں تو حضور انہیں اس بلاء سے نجات بخشتے ہیں، دنیا میں بھی حضور دافع البلاء ہیں اور آخرت میں بھی کہ قبر کی وحشت اور اندھیرے سے نجات حضور کے کرم سے ملے گی وہ تشریف لائیں گے تو قبر کے اندھیرے سے نجات ملے گی۔ اعلیٰ حضرت فرماتے ہیں:

قبر میں لہرائیں گے تاحشر چشمے نور کے جلوہ فرما ہوگی جب طلعت رسول اللہ کی

اور آخرت کی ہولناکیوں سے نجات بھی حضور کے کرم سے ملے گی کہ حضور وہاں بھی دافع البلا ہوں گے اور آپ ہی کے صدقے سے آپ کی امت کے گنہگار لوگ محشر و پل صراط کی سختیوں اور بلاؤں سے بچ کر داخل جنت ہوں گے۔ اعلیٰ حضرت فرماتے ہیں:

رضا پل سے اب وجد کرتے گزریئے کہ ہے رب سلم دعائے محمد

پائے کوباں پل سے گزریں گے تیری آواز پر رب سلم کی صدا پر وجد لاتے جائیں گے


قرآن پاک میں ارشاد باری تعالیٰ ہے: وَ مَا كَانَ اللّٰهُ لِیُعَذِّبَهُمْ وَ اَنْتَ فِیْهِمْؕ-(پ 9، الانفال: 33) ترجمہ: اللہ کہ یہ شان نہیں کہ انہیں عذاب دے جب تک اے حبیب تم ان میں تشریف فرما ہو۔ ایک اور جگہ ارشاد باری ہے: لَوْ تَزَیَّلُوْا لَعَذَّبْنَا الَّذِیْنَ كَفَرُوْا مِنْهُمْ عَذَابًا اَلِیْمًا(۲۵) (پ 26، الذریت: 35) ترجمہ: اگر مسلمان مکہ سے نکل جائیں تو ہم کافروں پر عذاب بھیجتے۔ ان آیات مبارکہ میں فرمایا کہ دنیا پر عذاب نہ آنے کی وجہ حضور کا تشریف فرما ہونا ہے نیز مکہ والوں پر فتح مکہ سے پہلے اس لیے عذاب نہ آیا کہ وہاں کچھ غریب مسلمان تھے معلوم ہوا کہ انبیائے کرام اور مؤمنین کے طفیل سے عذاب الٰہی نہیں آتا یہ حضرات دافع البلاء ہیں بلکہ آج بھی ہمارے اس قدر گناہوں کے باوجود جو عذاب نہیں آتا یہ سب اس سبز گنبد کی برکت سے ہے۔ اعلیٰ حضرت نے کیا خوب فرمایا:

تمہیں حاکم برایا، تمہیں قاسم عطایا تمہیں دافع بلایا تمہیں شافع خطایا

کوئی تم سا کون آیا

میرے آقا اعلیٰ حضرت فرماتے ہیں: سبحن اللہ ہمارے حضور دافع البلاء کفار پر سے بھی سبب دفر بلا ہیں اور مسلمانوں پر تو خاص رؤف و رحیم ہیں۔ (فتاویٰ رضویہ، 30/379)

حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمۃ اللہ علیہ لکھتے ہیں: ہمیں نظر نہیں آتا مگر حضور ہر مصیبت کے وقت غمخواری فرماتے ہیں۔ (اطیب النعم، ص 4)

تڑپ کے غم کے مارو تم پکارو یا رسول اللہ تمہاری ہر مصیبت دیکھ نا دم میں ٹلی ہوگی

غلط فہمی کا ازالہ: 7 ویں صدی کے عظیم بزرگ امام تقی الدین سبکی شافعی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: حضور سے مدد مانگنے کا یہ مطلب نہیں کہ حضور خالق و فاعل مستقل یعنی اللہ پاک کے عطا کے بغیر مدد فرمانے والے ہیں یہ تو کوئی مسلمان ارادہ نہیں کرتا تو اس معنی پر کلام کو ڈھالنا یعنی حضور سے مدد مانگنے کو اللہ سے ملانا اور حضور سے مدد مانگنے کو منع کرنا دین میں مغالطہ دینا اور مسلمانوں کو پریشانی میں ڈالنا ہے۔ (شفاء السقام، ص 175)

حشر میں ہم بھی سیر دیکھیں گے منکر آج ان سے التجا نہ کرے

شرح کلام رضا: میرے آقا اعلیٰ حضرت اس شعر میں فرماتے ہیں: جو لوگ آج دنیا میں اللہ پاک کے پیاروں کو بے اختیار سمجھتے ہیں روز محشر ہم بھی ان کا خوب تماشا دیکھیں گے کہ کس طرح بے بسی اور بے چینی کے ساتھ انبیائے کرام کے پاک درباروں میں شفاعت کی بھیک لینے کے لیے دھکے کھا رہے ہوں گے مگر ناکامی کا منہ دیکھیں گے جبھی تو کہا جا رہا ہے:

آج لے ان کی پناہ آج مدد مانگ ان سے پھر نہ مانیں قیامت میں اگر مان گیا

شرح کلام رضا: یعنی آج اختیارات مصطفیٰ کا اعتراف کرلے اور ان کے دامن کرم کی پناہ میں آجا اور ان سے مدد مانگ اگر تو نے یہ ذہن بنالیا کہ سرکار مدینہ ﷺ اللہ پاک کی عطا سے بھی مدد نہیں کر سکتے تو یاد رکھ کل بروز قیامت جب اللہ کے پیارے نبی ﷺ کی شان محبوبی ظاہر ہوگی اور تو اختیارات تسلیم کر لے گا اور شفاعت کی صورت میں مدد کی بھیک لینے دوڑے گا تو اس وقت سرکار نہیں مانیں گے کہ دنیا دار العمل یعنی عمل کی جگہ تھی اگر وہیں مان لیتا تو کام ہوجاتا اب ماننا کام نہ دے گا کیونکہ آخرت دار العمل نہیں دار الجزا یعنی دنیا میں جو عمل کیا اس کابدلہ ملنے کی جگہ ہے۔

بیٹھتے اٹھتے مدد کے واسطے یارسول اللہ کہا پھر تجھ کو کیا

خواب میں تشریف لا کر دلجوئی فرمائی: مکے مدینے کے تاجدار ﷺ اپنے غلاموں کے حالات سے کیسے خبردار ہیں اس ضمن میں امیر اہل سنت کے 1980ء کے سفر مدینہ کا ایک واقعہ پڑھئے اور جھومئے، چنانچہ سیدی قطب مدینہ رحمۃ اللہ علیہ کے ایک مرید حاجی اسمعیل مرحوم بمبئی ہند کے رہنے والے تھے مدینہ پاک میں سالہا سال رہتے رہے انہوں نے عاشق مدینہ امیر اہل سنت کو بتایا کہ ایک بڑی عمر کی خاتون سنہری جالیوں کے سامنے حاضر ہو کر اپنے سادہ سے انداز میں بارگاہ رسالت میں سلام عرض کر رہی تھی اتنے میں ان کی نظر ساتھ کھڑی ایک خاتون پر پڑی جو ایک کتاب سے دیکھ دیکھ کر خوبصورت القابات سے بارگاہ رسالت میں سلام عرض کر رہی تھی بڑی بی یہ دیکھ کر اداس ہوکر کہنے لگی: یا رسول اللہ میں تو اتنی پڑھی لکھی نہیں ہوں آپ تو شاید اسی اچھے انداز سے پڑھنے والی خاتون ہی کا سلام قبول فرمائیں گے میرا سلام بھلا کیسے پسند آئے گا اتنا کہہ کر وہ غمزدہ ہو کر رونے لگی جب رات میں سوئی تو اس کی قسمت جاگ گئی اللہ پاک کی عطا سے دلوں کی بات جاننے والے غمخوار آقا ﷺ نے خواب میں تشریف لاکر ارشاد فرمایا: مایوس کیوں ہوتی ہو؟ ہم نے تمہارا سلام سب سے پہلے قبول فرمایا ہے۔

تم اس کے مددگار ہو تم اس کے طرفدار جو تم کو نکمے سے نکما نظر آئے

لگاتے ہیں اس کو بھی سینے سے آقا جو ہوتا نہیں منہ لگانے کے قابل


ہمارے آقا ﷺ کو اللہ کریم نے سراپا رحمت بنایا ہے چنانچہ اللہ پاک پارہ 17 سورۃ الانبیا میں ارشاد فرماتا ہے: وَ مَاۤ اَرْسَلْنٰكَ اِلَّا رَحْمَةً لِّلْعٰلَمِیْنَ(۱۰۷) (پ 17، الانبیاء: 107) ترجمہ کنز الایمان: ہم نے نہ بھیجا تمہیں مگر رحمت سارے جہان کے لیے۔ یہ آپ ﷺ کی بے پایاں رحمت ہی ہے کہ کفار بھی دنیا میں عذاب سے محفوظ ہیں۔ اللہ پاک پارہ 9 سورۂ انفال کی آیت نمبر 33 میں ارشاد فرماتا ہے: وَ مَا كَانَ اللّٰهُ لِیُعَذِّبَهُمْ وَ اَنْتَ فِیْهِمْؕ- ترجمہ: اللہ کہ یہ شان نہیں کہ انہیں عذاب دے جب تک اے حبیب تم ان میں تشریف فرما ہو۔ ہمارے حضور ﷺ دافع البلا کفار پر سے بھی سبب دفعِ بلا ہیں، پھر مسلمان پر تو خاص رؤف رحیم ہیں، اعلیٰ حضرت رحمۃ اللہ علیہ عرض کرتے ہیں:

شافع روز جزا تم پہ کروڑوں درود دافعِ جملہ بلا تم پہ کروڑوں درود

ہمارے آقا ﷺ دافع البلا ہیں یہ ایسا مسلم عقیدہ ہے جسے ساری امت مانتی ہے، صحابہ کرام سے لے کر آج تک اس امت کا یہی نظریہ اور اعتقاد رہا ہے کہ اللہ پاک نے اپنے پیارے آخری نبی ﷺ کو سراپا رحمت بنایا ہے اور رحمت دفعِ بلا و زحمت ہوتی ہے، آپ کی برکت سے لوگوں کی حاجتیں پوری ہوتی ہیں، آفات دور ہوتی ہیں، بے سہارے غم کے مارے امتی آپ کے دامن اقد میں پناہ لیتے ہیں، صرف انسانوں کے ہی نہیں میرے آقا تو جانوروں بلکہ بے جان چیزوں کے لیے بھی دافعِ بلا ہیں، لہٰذا کبھی تو صحابہ کروم اپنی حاجات کے حصول کے لیے اور آفات کے دو ہونے کے لیے بارگاہ رسالت میں حاضر ہوتے ہیں اور کبھی جانور فریاد کر رہے ہیں کہیں لکڑی کا بے جان ستون حنانہ دافعِ بلا آقا ﷺ سے تسکین چاہتا ہے وہ سب کو نوازتے ہیں ہر جگہ عطا فرماتے ہیں، چنانچہ

جب حضرت جعفر طیار رضی اللہ عنہ کی شہادت ہوئی تو حضور انور ﷺ ان کے یہاں تشریف لے گئے اور ان کے یہاں یتیم بچوں کو خدمت اقدس میں یاد فرمایا، وہ حاضر ہوئے حضرت عبد اللہ بن جعفر طیار اسے بیان کر کے فرماتے ہیں: میری ماں نے حاضر ہو کر حضور پناہِ بے کساں ﷺ سے ہماری یتیمی کی شکایت عرض کی تو حضور نے فرمایا: کیا تو ان پر محتاجی کا اندیشہ کرتی ہے، حالانکہ میں ان کا والی و کارساز ہوں دنیا و آخرت میں۔

وہ غم نہیں کھاتا جس کا محافظ، والی، آقا اور ولی تو ہے

فتاویٰ رضویہ جلد 30 صفحہ نمبر 436 تا 437 پر ہے: حضرت شاہ ولی اللہ رحمۃ اللہ علیہ اپنے قصیدہ نعتیہ میں لکھتے ہیں، ترجمہ: ہمیں نظر نہیں آتا مگر سرکار ﷺ ہر مصیبت کے وقت غم خواری فرماتے ہیں۔

کیوں رضا مشکل سے ڈریئے جب نبی مشکل کشا ہو


اللہ پاک نے ہمارے پیارے اور آخری نبی ﷺ کو بے شمار کمالات اور معجزات سے نوازا ہے ان میں ایک کمال یہ بھی ہے کہ آپ دافع رنج و بلا ہیں۔

شتر ناشاد کی داد رسی: حضرت یعلی بن مرہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ہم حضور ﷺ کے ساتھ کہیں جارہے تھے کہ ہمارا گزر ایک ایسے اونٹ پر ہوا جس پر پانی دیا جا رہا تھا، اونٹ نے حضور کو دیکھا تو بلبلانے لگا اور اپنی گردن حضور کے سامنے جھکا دی، آپ اس کے پاس کھڑے ہوئے اور فرمایا: اس اونٹ کا مالک کون ہے؟ مالک حاضر ہوا تو ارشاد فرمایا: یہ اونٹ بیچتے ہو؟ اس نے عرض کی نہیں بلکہ یہ آپ کے لیے تحفہ ہے۔ مزید عرض کی کہ یہ ایسے گھرانے کا ہے جن کے پاس اس کے علاوہ اور کچھ نہیں، آپ اس اونٹ نے شکایت کی ہے کہ تم اس سے کام زیادہ لیتے ہو اور چارہ کم ڈالتے ہو اس کے ساتھ اچھا سلوک کرو۔ حکیم الامت مفتی احمد یار خان نعیمی رحمۃ اللہ علیہ اس واقعے کے تحت فرماتے ہیں: اس سے چند مسئلے معلوم ہوئے:

1۔ حضور جانوروں کی بولی بھی سمجھتے ہیں۔

2۔ حضور مشکل کشا اور حاجت روا ہیں۔

اور یہ وہ مسئلہ ہے جسے جانور بھی مانتے ہیں جو انسان مسلمان ہو کر حضور کو حاجت روا نہ مانے وہ جانوروں سے بھی بدتر ہے۔

3۔ حضور کی کچہری میں جانور بھی فریادی ہوتے ہیں۔

ہاں یہی کرتی ہیں چڑیاں فریاد ہاں یہی چاہتی ہے ہرنی داد

اسی در پہ شتران ناشاد گلہ رنج و عنا کرتے ہیں

(مراٰۃ المناجیح، 8/238-239)

قاضی عیاض مالکی رحمۃ اللہ علیہ کی مشہور زمانہ کتاب الشفا جس کے متعلق بزرگوں نے فرمایا: شفاء شریف وہ متبرک کتاب ہے کہ جس مکان میں رہے اسے ضرر نہ پہنچے اور جس کشتی میں رہے وہ ڈوبنے سے محفوظ رہے اور جو مریض اس کتاب پڑھے یا سنے شفا پائے۔ آپ نے اپنی کتاب میں تحریر فرمایا: غزوہ ذی قرد میں حضرت ابو قتادہ رضی اللہ عنہ کے چہرے پر ایک تیر لگا تو حضور نے انہیں بلا لیا اور زخم پر مبارک لعاب لگایا فرماتے ہیں اس وقت سے نہ تو مجھے درد ہوا اور نہ زخم میں پیپ پڑی بلکہ اچھا ہو گیا۔ (شفا شریف، 1/212)

اسی مزید فرماتے ہیں: جنگ بدر میں ابو جہل نے حضرت معوذ بن عفراء رضی اللہ عنہ کا ہاتھ کاٹ ڈالا پس وہ اپنا ہاتھ اٹھائے ہوئے حاضر ہوئے تو حضور نے اس ہاتھ پر اپنا لعاب دہن لگا دیا اور اس کو جوڑ دیا تو وہ اسی وقت جڑ گیا۔ (شفا شریف، 1/213)

اس سے پتا چلا کہ ہمارے اسلاف کا بھی یہی عقیدہ ہے کہ حضور رحمۃ للعالمین مشکل کشا اور دافع البلاء ہیں۔ اللہ پاک ہمیں خوش عقیدہ مسلمانوں کا ساتھ مقبول بارگاہ کے ساتھ حشر فرمائے۔ آمین

ہمارے پیارے آقا ﷺ دافع البلا ہیں اس متعلق احادیث میں کئی دلائل موجود ہیں جبکہ قرآن مجید خود اس پر شاہد ہے کہ آپ دافع البلا ہیں، اعلیٰ حضرت رحمۃ اللہ علیہ سے سوال کیا گیا کہ ایک بدمذہب کہتا ہے کہ درود تاج اور دلائل الخیرات پڑھنا شرک ہے اس لیے کہ اس میں حضور ﷺ کی شان میں یہ الفاظ کہے گئے کہ دافع البلا والوباء و القحط والمرض والالم یعنی مصیبتوں، وباؤں، قحط بیماری اور تکلیفوں کو دور کرنے والے اور یہ الفاظ کہنا شرک ہے اور اس درود کو پڑھنا بدعت سیئہ ہے۔ سوال کرنے والے نے اس بد مذہب کو جواب میں جو دلائل دیئے وہ سوال میں مذکور ہیں ان میں سے چند یہ ہیں:

وَ مَا كَانَ اللّٰهُ لِیُعَذِّبَهُمْ وَ اَنْتَ فِیْهِمْؕ-(پ 9، الانفال: 33) ترجمہ: اللہ کہ یہ شان نہیں کہ انہیں عذاب دے جب تک اے حبیب تم ان میں تشریف فرما ہو۔

وَ مَاۤ اَرْسَلْنٰكَ اِلَّا رَحْمَةً لِّلْعٰلَمِیْنَ(۱۰۷) (پ 17، الانبیاء: 107) ترجمہ: اور ہم نے تمہیں تمام جہاں کے لیے رحمت بنا کر ہی بھیجا۔

قَالَ اِنَّمَاۤ اَنَا رَسُوْلُ رَبِّكِ ﳓ لِاَهَبَ لَكِ غُلٰمًا زَكِیًّا(۱۹) (پ 16، مریم: 19) ترجمہ: میں تو تیرے رب کا بھیجا ہوا ہوں تاکہ میں تجھے ایک پاکیزہ بیٹا عطا کروں۔

ہمیشہ سے علما ان کا ورد کرتے رہتے ہیں تو کیا سب مشرک ہوگئے؟ شاہ ولی اللہ محدث دہلوی نے حضور ﷺ کو دافع البلاء فرمایا ہے، اس اعتراض کے جواب میں علمائے کرام نے اقوال پیش کیے ہیں، بدمذہبوں کے نزدیک تو معاذ اللہ سب مشرک جنہوں نے رسول ﷺ کو دافع البلاء لکھا ہے ہم احادیث سے کیا دلائل دیں جو بعد ہی لکھی گئی؟ حضور دافع البلاء ہیں اس پر قرآن مجید میں دلیل ہے: وَ لَوْ اَنَّهُمْ اِذْ ظَّلَمُوْۤا اَنْفُسَهُمْ جَآءُوْكَ فَاسْتَغْفَرُوا اللّٰهَ وَ اسْتَغْفَرَ لَهُمُ الرَّسُوْلُ لَوَجَدُوا اللّٰهَ تَوَّابًا رَّحِیْمًا(۶۴) (پ 5، النساء: 64) ترجمہ: اگر وہ اپنی جانوں پر ظلم کر بیٹھیں تو اے حبیب تمہاری بارگاہ میں حاضر ہوجائیں پھر اللہ سے معافی مانگیں اور رسول بھی ان کی مغفرت کی دعا فرمائیں تو ضرور اللہ کو بہت توبہ قبول کرنے والا مہربان پائیں۔ آیت کریمہ صاف بتارہی ہے کہ حضور کی بارگاہ میں حاضری توبہ قبول ہونے اور عذاب دور ہونے کا سبب ہے حالانکہ رب قادر ہے کہ ایسے ہی گناہ بخش دے مگر فرمایا کہ توبہ کی قبولیت چاہو تو ہمارے محبوب کی بارگاہ میں حاضر ہو۔ اسی طرح حدیث مبارکہ میں ہے: میں حمد ہوں میں محمد ہوں میں حاشر ہوں کہ لوگوں کو اپنے قدموں پر حشر دوں گا میں ماحی ہوں کہ اللہ میرے ذریعے سے کفر کی بلا دور فرماتا ہے۔ (مسلم، ص 985، حدیث: 2354)

رسالے میں ماحی یعنی مٹانے والا اس میں دلیل ہے کہ معاذ اللہ کفر سے بڑی اور کیا بلا ہے؟ آقا ﷺ کفر کو مٹانے والے ہیں ان سے بڑھ کر کون دافع البلاء ہے، اسی طرح تاریخ دمشق الکبیر میں ہے: میرا نام قرآن میں محمد، انجیل میں احمد، تورات میں اُحید اور میرا نام اُحید اس لیے ہوا کہ میں امت سے آتش دوزخ کو دفع فرماتا ہوں۔(فتاویٰ رضویہ، 30/473)

ان آیات و احادیث سے معلوم ہوا کہ حضور دافع البلا ہیں آقا ﷺ رب کی عطا سے بلاؤں کو دفع کرنے والے ہیں اور جو یہ کہے کہ حضور دافع البلاء نہیں اسے چاہیے کہ اپنی عقل کا علاج کروائے۔

کعبہ کے بدر الدجی تم پہ کروڑوں درود طیبہ کے شمس الضحی تم پہ کروڑوں درود


جیسا کہ ہم جانتے ہیں کہ ہم لمحہ بہ لمحہ موت کے قریب ہوتے جا رہے ہیں اور چونکہ موت کا وقت بھی کسی کو معلوم نہیں، یہ بھی جانتے ہیں کہ موت آنی ہی ہے اور ہمیں اپنے رب کے حضور پیش کیا جائے گا اور نہ کہ ہم خود بلکہ ہمارے اعمال بھی اللہ کی بارگاہ میں پیش کیے جائیں گے تو اگر ہمارے اعمال اللہ کی ناراضی والے ہوئے تو ہم کیا کریں گے اور ہمیں ہمارے گناہوں کے سبب جہنم میں ڈال دیا گیا تو ہم کس کے در پر جائیں گے؟ اس لیے ہمیں چاہیے کہ جو وقت ہمیں مل رہا ہے اس کو اللہ کی رضا والے کاموں میں بسر کریں تاکہ اللہ ہم سے راضی ہوجائے اور ہمیں بخش دے، ہم لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ رحمٰن ہے رحیم ہے تو یہ بھی درست ہے مگر جہاں وہ رحمٰن ہے وہاں وہ قہار بھی ہے جہاں وہ رحم فرماتا ہے وہاں وہ پکڑ فرمانے پر بھی قادر ہے، تو ہمیں یہ ہی چاہیے کہ ہماری جب تک زندگی ہے ہم اللہ کو راضی کرنے والے کاموں میں لگ جائیں، آئیے ہم قرآن پاک کی روشنی میں دیکھتی ہیں کہ کون سے اعمال کر کے ہم اللہ کو راضی کر سکتے ہیں:

فرامینِ الٰہی:

الَّذِیْنَ هُمْ فِیْ صَلَاتِهِمْ خٰشِعُوْنَۙ(۲) (پ 18، المؤمنون: 2) ترجمہ کنز الایمان: جو اپنی نماز میں گڑگڑاتے ہیں۔ اس آیت میں بتایا گیا ہے کہ جو اپنی نماز کو خشوع و خضوع سے پڑھتے ہیں اس وقت ان کے دلوں میں اللہ کا خوف ہوتا ہے اس عمل کے ذریعے بھی ہم اللہ کو راضی کر سکتی ہیں۔

وَ الَّذِیْنَ هُمْ عَنِ اللَّغْوِ مُعْرِضُوْنَۙ(۳) (پ 18، المؤمنون: 3) ترجمہ کنز العرفان: اور وہ جو فضول بات سے منہ پھیرنے والے ہیں۔

وَ الَّذِیْنَ هُمْ لِلزَّكٰوةِ فٰعِلُوْنَۙ(۴) (پ 18، المؤمنون: 4) ترجمہ کنز الایمان: اور وہ جو زکوٰۃ دینے کا کام کرتے ہیں۔

4،5۔ وَ الَّذِیْنَ هُمْ لِاَمٰنٰتِهِمْ وَ عَهْدِهِمْ رٰعُوْنَۙ(۸) (پ 18، المؤمنون: 8) ترجمہ کنز الایمان: اور وہ جو اپنی امانتوں اور اپنے عہد کی رعایت کرنے والے ہیں۔ اس آیت میں دو اعمال کے متعلق ذکر فرمایا گیا کہ ایک تو وہ عمل ہے کہ بندہ امانت میں خیانت نہ کرے اور اللہ کی رضا حاصل کر لے اور دوسرا یہ کہ وعدہ خلافی نہ کرے۔ یاد رہے کہ امانتیں خواہ اللہ کی ہوں یا مخلوق کی اور اسی طرح عہدخدا کے ساتھ ہو یا مخلوق کے ساتھ سب کی وفا لازم ہے۔

وَ الَّذِیْنَ هُمْ عَلٰى صَلَوٰتِهِمْ یُحَافِظُوْنَۘ(۹) (پ 18، المؤمنون: 9) ترجمہ کنز الایمان: اور وہ جو اپنی نمازوں کی نگہبانی کرتے ہیں۔اس آیت میں یہ فرمایا گیا کہ وہ لوگ کامیاب ہیں جو اپنی نمازوں کی حفاظت کرتے ہیں اور یہ رضائے الٰہی پانے کا اچھا ذریعہ ہے۔

وَ الَّذِیْنَ هُمْ لِفُرُوْجِهِمْ حٰفِظُوْنَۙ(۵) (پ 18، المؤمنون: 5) ترجمہ کنز الایمان: اور وہ جو اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کرتے ہیں۔

حضرت عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا: میرے لیے چھ چیزوں کے ضامن ہو جاؤ میں تمہارے لیے جنت کا ضامن ہوں: بات بولو تو سچ بولو، وعدہ کرو تو پورا کرو، تمہارے پاس امانت رکھی جائے تو ادا کرو، اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کرو، اپنی نگاہوں کو پست کرو اور اپنے ہاتھوں کو روکو۔ (مسند امام احمد، 8/412، حدیث: 22821) اس میں جنت کی ضمانت دی گئی تو ظاہر ہے کہ جو عمل کر کے ہم جنت حاصل کر سکتے ہیں وہ رضائے الٰہی پانے کا بھی بہترین ذریعہ ہے، کیونکہ اللہ کے راضی ہونے سے ہی ہم داخلِ جنت ہوں گے، اللہ رحم کرنے پر آئے تو وہ ایک چھوٹی سے چھوٹی نیکی پر بھی بخش سکتا ہے اور اگر غضب فرمانے پر آئے تو چھوٹے سے چھوٹے گناہ پر بھی پکڑ فرمانے پر قادر ہے، اس لیے ہم نیت کرتی ہیں کہ اللہ کی ناراضی والے تمام کاموں کو چھوڑ کر نیکیوں کو اپنی زندگی کا حصہ بنائیں گی۔ اللہ سے دعا ہے کہ اے اللہ تو ہمیں راضی فرما اور ہم سے راضی ہوجا۔ آمین