ہمارے پیارے آقا محمد مصطفےٰ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم کی کیا ہی اعلیٰ شان ہے کہ اللہ پاک نے آپ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم کو جیسے رحمۃ اللعلمین، سید المرسلین،راحت العاشقین، شفیع المذنبین اور نبیُّ الحرمین صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم بنا کر بھیجا ہے اسی طرح(خاتم النبیین)بھی بنا کر بھیجا ہے چنانچہ

ابو نعیم ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے راوی،رسولُ اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم فرماتے ہیں:جب موسیٰ علیہ الصلوٰۃ والسلام پر توریت اُتری، اسےپڑھا تو اس میں اس امّت کا ذکر پایا۔عرض کی:اے میرے رب!میں ان لوحوں میں ایک امت پاتا ہوں کہ وہ زمانے میں سب سے پچھلی اور مرتبے میں سب سے اگلی،تُو اس امت کو میری امت کردے،فرمایا:یہ احمد(صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم )کی امت ہے۔(دلائل النبوۃ ،1/ 4)دوسری حدیث:سلمان فارسی رضی اللہ عنہ سے راوی:جبریل امین علیہ الصلوٰۃ والتسلیمنے حاضر ہو کر حضور اقدس صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم سے عرض کی:حضور کا رب فرماتا ہے: بےشک میں نے تم پر انبیا کو ختم کیا اورکوئی ایسا نہ بنایا جو تم سے زیادہ میرے نزدیک عزت والا ہو،تمہارا نام میں نے اپنے نام سے ملایا کہ کہیں میرا ذکر نہ ہو جب تک میرے ساتھ یاد نہ کئے جاؤ۔بے شک میں نے دنیا واہلِ دنیا سب کو اس لئے بنایا کہ تمہاری عزت اور اپنی بارگاہ میں تمہارا مرتبہ ان پر ظاہر کروں۔اگر تم نہ ہوتے تو میں آسمان و زمین اور جو کچھ ان میں ہے اصلًا نہ بناتا ۔(مختصر تاریخ دمشق،2/ 137۔136)سبحان اللہ! مدینے والے آقا صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم کی کیا شان ہے! اللہ پاک نے آپ کو اپنا مقرب بنایا اور آپ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم کو خاتم النبیین بنا کر بھیجا کہ آپ جیسا اللہ پاک نے کسی کو نہیں بنایا اور آپ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم خاتم النبیین بناکر تمام نبیوں اور رسولوں کے سردار بنا دیے گئے اور اس وجہ سے سب امتوں سے زیادہ اس امت کو اہمیت دی گئی۔ ہمارے پیارے آقا صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم کے امتی ہو نے کی بدولت ہم جیسے گنہگاروں کو بھی اللہ پاک نے خوش خبری سنائی ہے۔ چنانچہ خطیبِ بغدادی حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے راوی،رسول اﷲ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم فرماتے ہیں:شبِ اسریٰ مجھے میرے رب نے نزدیک کیا یہاں تک کہ مجھ میں اور اس میں دو کمان بلکہ اس سے کم کا فاصلہ رہا اور مجھ سے فرمایا:اے محمد!کیا تجھے اس کا غم ہوا کہ میں نے تجھے سب پیغمبروں کے پیچھے بھیجا،میں نے عرض کی نہیں۔ فرمایا:کیا تیری امت کو اس کا رنج ہوا کہ میں نے انہیں سب امتوں کے پیچھے رکھا؟میں عرض کی نہیں۔فرمایا:اپنی امت کو خبر دے دے کہ میں نے انہیں سب سے پیچھے اس لئے کیا کہ اور امتوں کو ان کے سامنے رسوا کروں اور انہیں اوروں کے سامنے رسوائی سے محفوظ رکھوں۔تاریخ بغداد،5/ 130

کوئی سلیقہ ہے آرزو کا نہ بندگی میری بندگی ہے

یہ سب تمہارا کرم ہے آقا کہ بات اب تک بنی ہوئی ہے

اللہ پاک نے آپ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم سے جڑی ہر چیز میں کئی ہزار راز چھپائے ہوئے ہیں۔آپ صلی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلم کو خاتم النبیین بناکر آپ پر دینِ اسلام مکمل کیا۔ اب یہی دینِ اسلام کا پرچم قیامت تک لہراتے رہے گا۔انشاءاللہ