21 ذوالحجۃ الحرام, 1441 ہجری

: : :
(PST)

استاد کے ادب کے فوائد

Sat, 20 Jun , 2020
53 days ago

یَرْفَعِ اللّٰهُ الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا مِنْكُمْۙ-وَ الَّذِیْنَ اُوْتُوا الْعِلْمَ دَرَجٰتٍؕ- (المجادلہ ۱۱) ترجمہ کنز الایمان : اللہ تمہارے ایمان والوں کے اور ان کے جن کو علم دیا گیا درجے بلند فرمائے گا۔

زندگى مىں لوگ ہمىں مثالىں دے دے کر سمجھاتے ہىں اور زندگى کى بہترىن رہنمائى کے لىے اہم اور عمدہ مثال قرآن ہے، اور قرآن مىں جا بجا علم کا تذکرہ ہے اور علم ہمىں استاد سے حاصل ہوتا ہے۔

آسان سى بات ىہ ہے کہ جب انسان اىک گھر کى تعمىر کرتا ہے اس کى عمارت عمدہ بنائے، سىڑھىاں بنائے پر ذرا سوچے کہ اگر اس نے اوپر منزل پر جانا ہے تو اسے سىڑھوں کا سہارا چاہىے اگر وہ اسے استعمال نہ کرے تووہ اوپر نہىں جاسکتا اور سىڑھىوں کے ساتھ ساتھ تمیز سے بھى چلنے کى تاکىد ہوتى ہے کہ بے دھىان سے گرسکتا ہے اسى طرح انسان کى زندگى مىں استاد کى اہمىت ہوتى ہے علم کے لئے استاد ضرورى اور اس کے لئے تمىز اور ادب بھى ضرورى ہے۔

بغىر ادب کے وہ اس سے فائدہ حاصل نہىں کرسکتا، سب باتوں کو چھوڑىں ىہ دىکھىں کہ خود رسول صلى اللہ تعالىٰ علیہ وسلم نے فرماىا کہ : انما بعثت معلماً یعنی مىں معلم بنا کر بھىجا گىا ہوں۔

آپ صلى اللہ تعالىٰ علیہ وسلم کو معلم جیسا اہم مرتبہ بھی عطا ہوا صحابہ کرام بھی آپ کا ادب کرتے تھے۔

اور ادب کى بات ىہ ہے کہ جو استاد کہے کرنا چاہىے کہ استاد روحانى باپ ہوتا ہے والدىن بچے کى جسمانى پرورش کرتے ہىں، لىکن استاد بچوں کو زندگى کى سىڑھىاں چلنا سکھاتا ہے بس بات ىہ ہے کہ استاد بادشاہ نہىں ہوتا مگر بادشاہ بنادىتا ہے، اور استاد کا ادب کامىابى کى پہلى سىڑھى ہے