صحابہ کرام  کے فضائل

Wed, 2 Sep , 2020
1 year ago

اللہ تعالیٰ نے اس کائنات کی تخلیق فرمائی اور اس میں انسان کو پیدا فرمایا اور انسان کی تربیت کے لیے ہر دور میں اور ہر قوم پر رب العزت نے اپنے نبی علیہ السلام کو مبعوث فرمایا اور ان تمام انبیا میں سب سے افضل ہمارے آقا دوجہان سرور ِ کون ومکان اور ان نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی امت میں بھی ایک قوم کو کو تمام آنے والے لوگوں پر فضیلت دی کیونکہ ان لوگوں نے اپنی ایمانی آنکھوں سے حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی زیارت کی ان لوگوں کو صحابہ کہا جاتا ہے۔

نبی کریم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے صحابہ کرام کے فضائل آسمان کے ستاروں اور زمین کے ذروں کی طرح بیشمار ہیں، صحابہ کرام کی افضیلت خود رب تعالیٰ قرآن کریم میں ارشاد فرماتا ہے۔ تَرجَمۂ کنز الایمان:اللہ ان سے راضی اور وہ اللہ سے راضی اور ان کے لیے تیار کر رکھے ہیں باغ جن کے نیچے نہریں بہیں ہمیشہ ہمیشہ ان میں رہیں یہی بڑی کامیابی ہے۔ ۱۱، سورة توبہ، آیت ۱۰۰)

تو جب اللہ پاک ان سے راضی ہےتو ایک مسلمان کے لیے اس سے بڑھ کر خوشخبری کیا ہوگی کہ اس کا رب عزوجل اس سے راضی ہے اور جس سے رب راضی ہو اس کا مقام و مرتبہ کیا ہوگا، رب کریم نے ایک اور جگہ پر انہیں صحابہ کے لیے ارشاد فرمایا: (پارہ ۵، آیت ۹۵) اللہ پاک نے جنت اور وہاں کی نعمتیں ان کے لیے نامزد کردیں۔

حضور اکرم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے اپنے اصحاب کی افضلیت کو یوں بیان فرمایا :

۱۔ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ اس مسلمان کو آگ نہیں چھو سکتی کہ جس نے مجھے دیکھا۔(ترمذی شریف)

۲۔ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا میرے صحابہ ایسے ہیں جیسے کھانے میں نمک کہ کھانا نمک کے بغیر ٹھیک نہیں ہوتا، ( طبرانی)

تواب گویا کہ کسی کا ایمان بھی صحابہ کی محبت کے بغیر درست نہیں ہوگا۔

اسی طرح ہم حنفیوں کے پیشوا حضرت امام اعظم رحمۃ اللہ علیہ کی نظروں میں صحابہ کتنے افضل تھے کہ آپ فرماتے ہیں ہم اہلسنت تمام صحابہ سے محبت کرتے ہیں اور انہیں بھلائی ہی سے یاد کرتے ہیں۔(فقہ اکبر ص۸۵)

صحابہ کرام امتِ محمدیہ کی وہ جماعت ہے کہ جس کے ذریعے اللہ تعالیٰ نے اپنا دین اس زمین پر نافذ فرمایا اور صحابہ کرام امت کو گناہوں اور فتنوں سے بچاتے ہیں، جیسا کہ حضور صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے صحابہ کو بچایا

خلافت ، امامت، ولایت، کرامت

ہر اک فضل پر اقتدارِ صحابہ

اللہ کریم ہمیں صحابہ کرام سے محبت عطا فرمائے اور ان کی سیرت کا مطالعہ کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم

نوٹ: یہ مضامین نئے لکھاریوں کے ہیں۔حوالہ جات کی تفتیش و تصحیح کی ذمہ داری مؤلفین کی ہےادارہ اس کا ذمہ دار نہیں